امریکہ: سینیٹر کا معاون فحش مواد رکھنے کے الزام میں گرفتار

Image caption جیسی رائن لوسکیرن ایک دہائی سے زیادہ عرصے تک کیپیٹل ہل میں کام کر چکے ہیں

امریکی حکام کا کہنا ہے کہ رپبلکن پارٹی کے سینیئر سینیٹر لیمر الیگزینڈر کے معاون کو بچوں کی فحش تصاویر رکھنے کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔

جیسی رائن لوسکیرن سینیٹر لیمر الیگزینڈر کے چیف آف سٹاف تھے۔ انھیں امریکی ڈاک کی نگرانی کے محکمے کے اہلکاروں نے غیر قانونی مواد رکھنے اور اس کی ترسیل کرنے کے الزام میں واشنگٹن سے گرفتار کیا۔

لوسکیرن جمعرات کو وفاقی عدالت میں پیش ہوں گے۔

سینیٹر لیمر الیگزینڈر نے اس واقعے پر ردِ عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ ’میں نے جو سنا اس سے مجھے دھچکہ لگا ہے اور میں حیران اور مایوس ہوا ہوں۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ میرے دفتر کا عملہ تفتیش کاروں کے ساتھ مکمل تعاون کر رہا ہے۔

کی عمر 35 سال ہے اور وہ ایک دہائی سے زیادہ عرصے تک کیپیٹل ہل میں کام کر چکے ہیں۔ مقامی میڈیا کے مطابق لوسکیرن سنہ 2012 میں سینیٹر لیمر الیگزینڈر کے چیف آف سٹاف بنے تھے۔

لیمر الیگزینڈر پہلی دفعہ سنہ 2002 میں سینیٹ کے رکن منتخب ہوئے۔ وہ اس پہلے امریکہ کے سیکریٹری تعلیم اور ریاست ٹینیسی کے گورنر رہے۔

اطلاعات کے مطابق حکام نے بدھ کو لوسکیرن کے گھر کی تلاشی لی اور لامر الیگزینڈر کے دفتر میں لاسکارن کے کمپیوٹر کی بھی جانچ کی۔

اس واقعے کے بعد لامر الیگزینڈر نے لوسکیرن کو چیف آف سٹاف کے عہدے سے برطرف کرتے ہوئے ایک دوسرے معاون کو اس عہدے پر تعینات کر دیا۔

رپبلکن سینیڑ نے بعد میں کہا کہ ’عدالت اس بات کا فیصلہ کرے گی کہ لوسکیرن گناہ گار ہیں یا نہیں لیکن موجودہ حالات میں وہ اپنی ذمہ داریاں نہیں نبھا سکتے۔‘

اسی بارے میں