مشہور ٹرین ڈاکو رونی بگز انتقال کر گئے

Image caption رونی 2001 میں علاج کے لیے برطانیہ واپس آئے تاہم انھیں جیل میں بھیج دیا گیا

برطانوی مجرم رونی بگز کی ترجمان کا کہنا ہے کہ رونی بدھ کی صبح 84 برس کی عمر میں انتقال کر گئے ہیں۔

رونی بگز نے برطانیہ میں آٹھ اگست سنہ 1963 کو ریل پر پڑنے والے بڑے ڈاکے میں حصہ لیا تھا جسے ’گریٹ ٹرین رابری‘ کہا جاتا ہے۔

یہ ٹرین گلاسگو سے لندن جا رہی تھی کہ رونی اور ان کا ٹولا 26 لاکھ برطانوی پاؤنڈ لوٹ کر فرار ہو گیا تھا۔

بگز بعد میں پکڑے گئے اور انھیں 30 برس کی قید ہوئی، لیکن وہ سنہ 1965 میں ورڈزورتھ جیل سے فرار ہو کر برطانیہ سے باہر چلے گئے۔ تاہم جب وہ سنہ 2001 میں علاج کے لیے برطانیہ واپس آئے تو انھیں دوبارہ جیل بھیج دیا گیا۔

انھیں سنہ 2009 کے بعد نمونیہ کی شکایت ہونے کے بعد انسانی ہمدردی کی بنیاد پر رہا کر دیا گیا۔

رونی بگز برطانیہ کے شمالی علاقے میں واقع کارلٹن کورٹ کیئر ہوم میں بدھ کی صبح انتقال کر گئے۔

انھیں فالج کی وجہ سے بات چیت کرنے میں مشکل پیش آ رہی تھی۔

بگز کو آخری بار مارچ میں عوام کے درمیان اس وقت دیکھا گیا جب وہ اپنے ساتھی بریس رینالڈز کے جنازے میں شریک تھے۔

رونی بگز کی سوانح حیات لکھنے والے مصنف کرسٹوفر پیکارڈ کا کہنا ہے کہ انھیں گذشتہ 50 برس کی عظیم شخصیات میں سے ایک کے طور پر یاد رکھا جائے۔

انھوں نے بی بی سی ریڈیو فور کے ٹوڈے پروگرام کو بتایا کہ ان کے دوست بگز مہربان، فیاض اور اچھی حسِ مزاح کے مالک تھے۔

بگز میڈیا کے دور کی پہلی پیداوار تھے، جنھوں نے دنیا گھوم کر شہرت حاصل کی۔