نفسیاتی تشدد کو مجرمانہ قرار دینے کا مطالبہ

تصویر کے کاپی رائٹ abuse
Image caption سروے میں شریک 94 فیصد افراد نے کہا کہ نفسیاتی تشدد جسمانی تشدد سے زیادہ تکلیف دہ ہوتا ہے

برطانیہ میں مصبرین کا مطالبہ ہے کہ گھریلو تشدد کے زیادہ سے زیادہ متاثرین کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے نفسیاتی تشدد کو قابلِ سزا جرم قرار دیا جانا چاہیے۔

ان مصبرین کا ایک گروپ، جس میں تنظیم ویمنز ایڈ شامل ہے، کہتا ہے کہ موجودہ قوانین مار پٹائی جیسے مخصوص واقعات کو ہی زیادہ اہمیت دیتے ہیں۔

ان کا کہنا ہے کہ موجودہ قوانین کنٹرول اور اثر و رسوخ کو نظر انداز کرتے ہیں جو کہ گھریلو تشدد کا محور ہوتا ہے۔

برطانوی وزارتِ داخلہ کا کہنا ہے کہ گھریلو تشدد کے واقعات کی پولیس رپورٹوں کا جائزہ لے کر اس معاملے کو زیرِ غور لایا جائے گا۔

ویمنز ایڈ، سارا چارلٹن فاؤنڈیشن اور پالاڈن کے ایک گروپ نے حکومت کو مشورہ دیا ہے کہ جابرانہ رویے اور نفسیاتی طور پر پرتشدد برتاؤ کو مجرمانہ فعل قرار دیا جائے تاکہ اسے ثابت کر کے طویل عرصے تک ایسے ماحول میں رہنے والوں کی مدد کی جا سکے۔

برطانوی وزارتِ داخلہ کی گھریلو تشدد کی تعریف میں جابرانہ رویے کے تحت حد سے زیادہ حسد، کسی کو اپنے خاندان والوں یا گھر والوں سے ملنے سے روکنا یا پھر کسی کے لباس پر اپنی مرضی عائد کرنا شامل ہے، تاہم اسے مجرمانہ فعل قرار نہیں دیا گیا ہے۔

مبصرین کے اس گروپ نے گھریلو تشدد کے 258 متاثرین کا دسمبر 2013 اور گذشتہ ماہ کے دوران سروے کیا تھا جس کے بعد وہ اس نتیجے پر پہنچے کہ 88 فیصد متاثرین سمجھتے ہیں کہ عدالتی نظام نفسیاتی تشدد کو جرم خیال نہیں کرتا۔

اس کے علاوہ سروے میں شریک 94 فیصد افراد نے کہا کہ نفسیاتی تشدد جسمانی تشدد سے زیادہ تکلیف دہ ہے۔

ویمنز ایڈ کی چیف ایگزیکیٹیو پولی نیٹ کا کہنا تھا کہ ’ان نتائج سے یہی بات واضح ہوتی ہے جو ہمارے ارکان ہمیں بہت عرصے سے بتا رہے ہیں کہ عدالتی نظام جسمانی تشدد کے مخصوص واقعات کو ہی مانتا ہے اور قریبی رشتوں میں نفسیاتی تشدد پر غور نہیں کرتا۔

’اس وقت ہر ہفتے دو خواتین اپنے ساتھی یا گذشتہ ساتھی کے ہاتھوں قتل ہوتی ہیں اور ان ہلاکتوں کو روکنے میں اگلا اہم قدم یہ ہے کہ عدالتی نظام جابرانہ اور پرتشدد رویے کو بھی نظر انداز نہ کرے۔‘

اسی بارے میں