لیبیا کے وزیرِ اعظم علی زیدان معزول

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption علی زیدان کی جگہ اب وزیرِ دفاع عبداللہ الثنی کو قائم مقام وزیر اعظم بنایا گیا ہے

لیبیا کی پارلیمان نے تیل سے بھرے ایک ٹینکر کے نیوی کے محاصرے سے نکل جانے کی اطلاعات کے بعد وزیر اعظم علی زیدان کو ان کے عہدے سے معزول کر دیا ہے۔

اراکینِ پارلیمان نے ان اطلاعات کے بعد اعتماد کے ووٹ کا مطالبہ کیا تھا جن کے مطابق ایک شمالی کوریا کے پرچم والا ایک تیل بردار بحری جہاز ملک کی سمندری حدود سے نکلنے میں کامیاب ہو گیا۔

وزیرِ دفاع عبداللہ الثنی کو قائم مقام وزیر اعظم بنایا گیا ہے۔

اس سے پہلے لیبیا کے حکام نے کہا تھا کہ سدرہ نامی بندگاہ سے نکلنے کی کوشش کرنے والے اس جہاز پر اب ان کا مکمل کنٹرول ہے تاہم باغیوں نے اس حکومتی دعوے کی تردید کی تھی۔

اگست کے بعد سے علیحدگی پسند باغیوں نے نے کم سے کم تین بندرگاہوں پر قبضہ کر لیا ہے۔

ان کا مطالبہ ہے کہ انہیں ملک کے تیل سے حاصل ہونے والے زرِ مبادلہ میں زیادہ سے زیادہ حصہ دیا جائے۔ اس کے علاوہ وہ مشرقی خطے البرقہ کی خود مختاری بھی چاہتے ہیں۔

’مارننگ گلوری‘ نامی یہ تیل بردار جہاز کم سے کم 234,000 بیرل تیل لے کر گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption بی بی سی کے نامہ نگار کے مطابق وزیرِ اعظم علی زیدان کی معزولی سے لیبیا کے استحکام کے بارے میں خدشات میں اضافہ ہوگا

گذشتہ برس جولائی میں باغیوں کی جانب سے بندرگاہ پر قبضے کے بعد سے یہ پہلا تیل بردار بحری جہاز ہے جو وہاں سے نکلا ہے۔

طرابلس میں بی بی سی کے نامہ نگار رانا جواد کا کہنا ہے کہ وزیرِ اعظم علی زیدان کی معزولی سے لیبیا کے استحکام کے بارے میں خدشات میں اضافہ ہوگا۔ وہاں پہلے ہی حکومت ملک کے ایک بڑے حصے پر تسلط قائم رکھنے میں مشکلات کا شکار ہے۔

لیبیا کی پارلیمان کے ارکان کا کہنا تھا کے خراب موسم کے باعث نیوی کے جہاز بحیرہ روم میں تیل بردار جہاز کا پیچھا نہیں کر پائے۔

ایک رکن نے بتایا کے نیوی کے جہازوں کو ساحل کے قریب رہنے کی تاکید کی گئی تھی اس لیے ’ٹینکر نے اس فاصلے کا فائدہ اٹھایا اور کھلے سمندر میں نکل گیا۔‘

ماہرین کا کہنا ہے کہ ایسا نہیں لگتا کہ یہ جہاز شمالی کوریا کا ہوگا اور عین ممکن ہے کہ یہ جھنڈا اصل مالکان کی پہچان چھپانے کے لیے لگایا گیا ہو۔

اسی بارے میں