اسرائیل کے شامی فوجی تنصیبات پر فضائی حملے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption تین سال قبل شام میں بغاوت کے آغاز کے بعد سے اب تک اسرائیل نے ان کی حدود میں متعدد فضائی حملے کیے ہیں

اسرائیل کا کہنا ہے کہ اس نے گولان کی پہاڑیوں پر ہونے والی بمباری میں اپنے چار فوجیوں کی ہلاکت کے بعد جوابی کارروائی کے طور پر شام کی کئی فوجی تنصیبات پر حملے کیے ہیں۔

اسرائیلی فوج کا کہنا ہے کہ جن فوجی تنصیبات کو نشانہ بنایا گیا ان میں فوجی صدر دفتر، ایک تربیت گاہ اور توپخانے شامل ہیں۔

اسرائیلی فوج کے مطابق شامی فوج نے منگل کو سرحدی باڑ کے قریب گشت پر مامور فوجیوں پر حملہ کیا۔

تاحال اس فضائی حملے پر شامی فوج کی جانب سے کوئی بیان سامنے نہیں آیا ہے اور نہ ہی تاحال کسی قسم کی ہلاکت کی کوئی اطلاع ہے۔

تین سال قبل شام میں بغاوت کے آغاز کے بعد سے اب تک اسرائیل نے اس کی حدود میں متعدد فضائی حملے کیے ہیں۔

ان حملوں کا جواز یہ دیا جاتا رہا کہ کہ ان کی مدد سے شامی صدر بشار الاسد کی حامی لبنانی تنظیم حزب اللہ کی راکٹوں کی فراہمی کو روکا جا سکے۔ تاہم حالیہ حملوں کو جوابی کارروائی قرار دیا گیا ہے۔

بیت المقدس میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوج کی جانب سے حملوں کا ہدف بنائے گئے مقامات سے ظاہر ہوتا ہے کہ وہ واضح طور پر اپنے فوجیوں پر حملے کا ذمہ دار شامی فوج کو سمجھتی ہے نہ کہ باغیوں یا حزب اللہ کے جنگجوؤں کو۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ماضی میں کی جانے والی جوابی کارروائی میں اسرائیلی فوج نے توپخانے کا استعمال کیا ہے تاہم اس مرتبہ جنگی جہازوں کے استعمال سے واقعہ کی سنگینی کا احساس ہوتا ہے۔

بدھ کو کابینہ کے اجلاس کے آغاز پر اسراییل کے وزیرِ اعظم بنیامن نیتن یاہو نے خبردار کیا کہ ان کا ملک اپنے خلاف کسی بھی حملے کا بھرپور جواب دے گا۔

انھوں نے کہا کہ: ’ہماری پالیسی سادہ ہے، جو ہمیں نقصان پہنچائے گا ہم اسے نقصان پہنچائیں گے۔‘

گولان کی پہاڑیاں شام کی جنوب مغربی سرحدی علاقے کی چٹانوں پر مشتمل علاقہ ہے۔

اسی بارے میں