یوکرین کے شہریوں کا فوج کو ایک ملین ڈالر کا عطیہ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption مالی مشکلات کی وجہ سے یوکرین کے پاس اس وقت صرف 6000 فوجی جنگ لڑنے کے لیے تیار ہیں: عبوری صدر

اطلاعات کے مطابق یوکرین میں وزارتِ دفاع کی جانب سے فنڈز کی اپیل کے سلسلے میں ٹیلی فون پر مہم چلانے کے بعد عام شہریوں نے مالی مشکلات سے دوچار ملک کی فوج کو دس لاکھ ڈالر کے عطیات دیے ہیں۔

وزارتِ دفاع کے سرکاری فیس بک صفحے کا کہنا ہے کہ ’یوکرین کی فوج کی حمایت کریں! فوج کی مدد کے لیے مالی، تکنیکی اور طبی سامان جمع کرنے کے لیے شہری مہم چلائیں۔

وزارت کا کہنا ہے کہ لوگوں نے اب تک ننانوے لاکھ ہرونیا (تقریباً دس لاکھ ڈالر) تک عطیہ کر دیے ہیں جن میں سے بیشتر گذشتہ تین دنوں میں موبائل فون کی مدد سے بھیجےگئے ہیں۔

لوگوں سے کہا گیا تھا کہ وہ 565 پر ٹیکسٹ پیغام بھیجیں تو پانچ ہرونیا فوج کو منتقل ہو جائیں گے۔ وزارت کا کہنا ہے کہ ان عطیات میں نصف سے زیادہ انفرادی طور پر شہریوں نے بھیجے ہیں مگر یوکرین کی کمپنیوں نے بھی امداد کی ہے۔

حال میں ملک کے عبوری صدر الگیزنڈر ترچنوف نے ایک بیان میں کہا تھا کہ مالی مشکلات کی وجہ سے یوکرین کے پاس اس وقت صرف 6000 فوجی جنگ لڑنے کے لیے تیار ہیں۔

اس مہم میں انٹرنیٹ پر نوسرباز افراد کی جانب سے یہ کوشش بھی کی گئی ہے کہ روسی افراد کو اس نمبر پر پیغام بھیجنے کا جھانسا دیا جائے۔ان جعلی مہمات میں روسی افراد سے کہا جاتا ہے کہ کرائمیا کو آزاد کرانے والوں کی امداد کے لیے 565 نمبر پر پیغام کسی بھی یوکرینی نیٹ ورک سے بھیجیں۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اس سے کرائمیا میں موجود روس حامی فوجیوں کے لیے کھانا، موزے اور موبائل شاور خریدے جائیں گے۔

اب تک اس بات کی تصدیق نہیں ہو سکی کہ اس جعلی مہم کے جال میں اب تک کوئی پھنسا ہے یا نہیں۔

اسی بارے میں