’ازبکستان کی شہزادی‘ گھر میں ’نظر بند‘

تصویر کے کاپی رائٹ GETTY IMAGES
Image caption کچھ عرصہ پہلے تک گلنارا کریمووا کو ازبکستان کی مسقبل کی صدر تصور کیا جاتا تھا

ازبکستان کے صدر اسلام کریموف کی بیٹی گلنارا کریمووا نے ایک خفیہ خط کے ذریعے اپنے خاندان کے افراد اور باپ کے قریبی ساتھیوں پر الزام عائد کیا ہے کہ ان لوگوں نے انہیں گھر میں قید کر دیاگیا ہے اور ان پر تشدد کیا گیا ہے۔

گلنارا کریمووا اپنے پوپ سٹار سٹائل اور سیاسی عزائم کے باعث ’ازبکستان کی شہزادی‘ کے نام سے مشہور ہیں۔ کچھ عرصے قبل تک گلنارا کے بارے میں کہا جاتا تھا کہ وہ اپنے والد کی جگہ لیں گی۔ گلنارا ٹوئٹر پر اپنے مخالفین اور ملکی اداروں کو تنقید کا نشانہ بناتی رہتی تھیں۔

گلنارا کریموا پانچ ہفتے قبل تک انٹرنیٹ پر متحرک تھیں لیکن اب ان کا ٹوئٹر اکاؤنٹ بند ہو چکا ہے۔

بی بی سی نیوز کی نتالیہ اینتیلاو کو بھیجی گئی ایک ای میل میں گلنارا کریمووا کے ہاتھ کا لکھا ہوا خط منسلک کیاگیا جس میں الزامات کی ایک لمبی فہرست ہے۔ گلنارا کریمووا نے الزام عائد کیا ہے کہ انھیں گھر میں نظر بند کر دیا گیا ہے اور ان پر تشدد کیا گیا ہے۔ وہ کہتی ہیں: ’مجھے مارا گیا ہے، میں زبردست نفسیاتی دباؤ میں ہوں، آپ میرے بازوں پر زخموں کے نشان گن سکتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption گلنارا اپنی ماں اور بہن پر جادو کرنے کا الزام عائد کرتی ہیں

وہ اپنے خط میں مزید لکھتی ہیں کہ ’میں مجھے روزانہ دھمکیاں ملتی ہیں اور جس گھر میں مجھے رکھاگیا ہے اس میں ہر طرف کیمرے لگے ہوئے ہیں‘۔

گلنارا کریمووا لکھتی ہیں:’میں کتنی بھولی تھی۔ میں سمجھتی تھی کہ ملک میں قانون کی حکمرانی ہے۔‘

کریموا کے حامیوں نے ٹوئٹر پر ایسی تصاویر پوسٹ کی ہیں جن میں ان کے گھر کے باہر پولیس گارڈز نظر آر رہے ہیں جہاں انھیں مبینہ طور پر حراست میں رکھا گیا ہے۔

گلنارا کریموا فیشن ڈیزائنر ہیں اور کچھ عرصہ پہلے کئی ٹی وی سٹیشنوں کی مالک بتائی جاتی تھیں۔ اب وہ ٹی وی سٹیشن بند ہو چکے ہیں اور کریمووا اپنے باپ صدر اسلام کریموف کے قریبی ساتھیوں کے خلاف مہم چلا رہی تھیں۔گلنارا کریمووا نے اپنے باپ کے سب سے اعلیٰ سکیورٹی اہلکار رستم عنایتوف کے خلاف مہم چلائی اور الزام عائد کیا تھا کہ وہ ازبکستان کا صدر بننے کی تیاری کر رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption گلنارا نے فرانسیسی اداکار ژیرار دیپاردیو کی ویڈیو میں کام کیا ہے

گلنارا کریمووا کا آخری ٹوئٹر پیغام تاشقند میں ان کے لگژری فلیٹ پر پولیس کے چھاپے سے ایک روز پہلے نشر ہوا تھا۔ اس چھاپے میں پولیس نے کچھ ایسے لوگوں کو گرفتار کیا تھا جن کے بارے میں پہلے سوچا بھی نہیں جا سکتا تھا۔ گرفتار کیے جانے والے افراد میں ایک رستم مادوعمروف ہے جو گلنارا کا بزنس پارٹنر اور ’بوائے فرینڈ‘مانا جاتا ہے۔

گلنارا کریمووا کے ساتھ ان کی سولہ سالہ بیٹی ایمان بھی نظر بند ہے۔ایمان افغان نژاد امریکی شہری منصور مقصودی کی بیٹی ہے۔ گلنارا کریمووا کی منصور مقصودی سے علیحدگی ہو چکی ہے۔

بی بی سی نیوز کی نتالیہ اینتیلاوکو گلنارا کریموا کا خط پہنچنے والے ذریعے نے بتایا کہ تاشقند میں امریکی سفارت خانے کے ایک اہلکار نے اس گھر کا دورہ کیا جہاں سولہ سالہ ایمان کو نظر بند رکھا گیا ہے کیونکہ وہ امریکی شہری ہیں۔

تاشقند میں امریکی سفارت خانے نے اس خبر کی تصدیق یا تردید کرنے سے انکار کیا ہے کہ امریکی سفارت خانے کے کسی اہلکار نے کسی گھر کا دورہ کیا ہے۔

Image caption گلنارا کریمووا کا انٹرنیٹ اکاونٹ اب بند ہو چکا ہے

اپنے خط میں گلنار کریموا نے اپنی ماں، بہن اور باپ کے قریبی ساتھیوں پر الزامات عائد کیے ہیں۔

گلنارا نے فرانسیسی اداکار ژیرار دیپاردیو کی ویڈیو میں کام کیا ہے۔ زیر عتاب آنے سے پہلے ازبکستان کے کئی ٹی وی چینل اور ریڈیو سٹیشن ان کو ایک مخیر خاتون اور فن کی سرپرست کے طور پر مشتہر کرتے ہیں۔

گلنارا نے گزشتہ سال 13 نومبر کو ایک ٹویٹ میں کہا تھا کہ مسلح افراد نے ان کے بند ہونے والے ٹی وی چینل کے یوتھ سٹوڈیو میں توڑ پھوڑ کی۔ انہوں نے لکھا ’لوگوں کو مارا پیٹا گیا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گلنارا کی چھوٹی بہن لولا کریمووا نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ دونوں بہنوں میں کئی سالوں سے بات چیت نہیں ہوئی ہے

ستمبر میں گلنارا کی مشکلات کا آغاز اس وقت ہوا جب ان کی چھوٹی بہن لولا کریمووا نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ دونوں بہنوں میں کئی سالوں سے بات چیت بند ہے۔

اس کے جواب میں گلنارا نے الزام عائد کیا کہ ان کی والدہ اور بہن جادو ٹونے کرتے ہیں۔

اسی بارے میں