سعودی عرب: ڈرائیونگ کی خلاف ورزی پر خاتون گرفتار

Image caption سعودی عرب میں گذشتہ کچھ عرصے سے خاتون کی جانب سے پابندی کی خلاف ورزی کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے

سعودی عرب میں حکام نے ایک خاتون کو ڈرائیونگ پر عائد پابندی کی خلاف ورزی کرنے پر گرفتار کر لیا۔

مقامی میڈیا کا کہنا ہے کہ مشرقی صوبے کتیف میں 23 سالہ خاتون کو گرفتار کرنے کے بعد ضمانت پر رہا کر دیا گیا۔

حکام نے خاتون کے شوہر کو بھی جرمانہ کیا جبکہ ان کی گاڑی کو سات دن کے لیے بند کر دیا گیا ہے۔

سعودی عرب دنیا کا واحد ملک ہے جہاں پر خواتین کو گاڑی چلانے کی اجازت نہیں ہے۔ یہ پابندی قانون کا حصہ نہیں تاہم معاشرتی اور تہذیبی طور پر سعودی عرب میں اس عمل کی اجازت نہیں ہے جس کی وجہ سے خواتین کو ڈرائیونگ لائسنس کا اجرا نہیں کیا جاتا اور اس بنا پر انہیں ڈرائیونگ کرنے پر گرفتار بھی کیا جا سکتا ہے۔

خواتین کی ڈرائیونگ پر عائد پابندی پر عمل پولیس کے ذریعے کروایا جاتا ہے جس میں جرمانہ اور گرفتاریاں شامل ہیں۔ سعودی عرب میں صرف مردوں کو ڈرائیونگ لائسنس جاری کیے جاتے ہیں۔

سعودی عرب میں گذشتہ سال خواتین کی ڈرائیونگ کے حق میں کام کرنے والی تنظیم ’وومن ٹو ڈرائیو‘ نے مہم چلائی تھی جس میں خواتین پر زور دیا گیا تھا کہ وہ پابندی کی خلاف ورزی کرتے ہوئے سڑکوں پر گاڑی چلائیں۔

اطلاعات کے مطابق 60 سے زائد خواتین نے گاڑیاں چلا کر احتجاجی مہم میں حصہ لیا تھا اور حکام نےگاڑی چلانے والی 16 خواتین کو جرمانے کیے تھے۔

اسی بارے میں