داعش کی پیشقدمی، بغداد میں مہدی آرمی کا مارچ

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مقتدیٰ الصدر نے شیعہ ملیشیا سے کہا تھا کہ وہ بغداد کی سڑکوں پر عسکری قوت کا مظاہرہ کریں

عراق کے دارالحکومت بغداد میں مقتدیٰ الصدر کے اعلان پر شیعہ ملیشیا کی بڑی تعداد نے سڑکوں پر پریڈ کی جس کے باعث بغداد میں فرقہ وارانہ کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے۔

مقتدیٰ الصدر نے شیعہ ملیشیا سے کہا تھا کہ وہ بغداد کی سڑکوں پر عسکری قوت کا مظاہرہ کریں۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ شیعہ ملیشیا کی جانب سے عسکری قوت کے مظاہرے کے بعد بغداد میں حکومت کے لیے کافی مشکل صورتحال پیدا ہو گئی ہے۔

واضح رہے کہ دولت اسلامی عراق و شام (داعش) نے عراق کے کئی شہروں پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

شمالی عراق میں بیجی کی آئل ریفائنری اور تل عفر کے ہوائی اڈے پر قبضے کے لیے داعش اور حکومت کی حامی طاقتوں کے درمیان شدید لڑائی جاری ہے۔

بیجی میں عراق کا تیل کا سب سے بڑا کارخانہ ابھی تک باغیوں کے گھیرے میں ہے اور ان کا دعویٰ ہے کہ انھوں نے تل عفر کے ہوائی اڈے کے زیادہ تر حصے پر بھی قبضہ کر لیا ہے۔

امکان ہے کہ امریکی وزیر خارجہ جان کیری جلد ہی عراق جائیں گے جہاں وہ ملک کے مختلف فرقوں کے درمیان تناؤ کم کرنے کے لیے اس بات پر زور دیں گے کہ عراقی کابینہ میں تمام فرقوں کو نمائندگی دی جائے۔

عراقی وزیرِاعظم نوری المالکی پر الزام رہا ہے کہ ان کی سنی مخالف پالیسیوں کی وجہ سے کچھ سنی شدت پسند جہادی تنظیم دولت اسلامی عراق و شام میں شامل ہوگئے ہیں اور عراقی فوجیوں کے خلاف جاری لڑائی میں حصہ لے رہے ہیں۔

داعش نے دعویٰ کیا ہے کہ انھوں نے بیجی آئل ریفائنری کے نواح میں عراقی فوج کے دو ہیلی کاپٹر بھی مار گرائے ہیں، لیکن اس دعوے کی آزاد ذرائع سے تصدیق نہیں ہوئی ہے۔

شمالی عراق کے شہر ابریل سے بی بی سی کے نامہ نگار جِم موئر کے مطابق ممکن ہے کہ اب تک عسکریت پسندوں نے بیجی کی وسیع وعریض آئل ریفائنری کے کچھ حصوں پر قبضہ کر لیا ہو۔ آئی ایس آئی ایس کے جنگجو بغداد سے 70 میل دور کیمیائی ہتھیاروں کے ایک متروک کارخانے پر پہلے ہی قبضہ کر چکے ہیں۔

اگرچہ امریکہ کا کہنا ہے کہ اس کارخانے میں ایسا کوئی مواد نہیں ہے جس سے باغی کیمیائی ہتھیار بنا سکیں، لیکن امریکی دفتر خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ’اگر داعش کے عسکریت پسند کسی بھی فوجی تنصیب پر قبضہ کر لیتے ہیں تو ہمیں فکر ہوگی۔‘

اسی بارے میں