اردن، شام کے ساتھ سرحدی چوکیوں پر داعش کا کنٹرول، ’فوری فضائی امداد کی ضرورت ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption عراقی فوج کے بارے میں کہا جا رہا ہے کہ اس نے ابتدائی شکست کے بعد اب بہتر کارکردگی دکھانا شروع کی ہے

عراقی حکومت نے امریکہ سے درخواست کی ہے کہ اسے فوری طور پر فضائی امداد فراہم کی جائے جبکہ امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری خطے کے رہنماؤں سے بات چیت کی غرض سے اردن کے دارالحکومت عمان پہنچ گئے ہیں۔

دوسری جانب شدت پسند تنظیم دولت اسلامی عراق و شام (داعش) کی جانب سے عراق کی مغربی سرحد پر اردن اور شام کی سرحدی چوکیوں پر قبضے کے بعد اس سرحد پر حکومت کی عمل داری بظاہر ختم ہو گئی ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ باغیوں نے انبار صوبے میں دو چوکیوں پر قبضہ کر لیا ہے۔ اس سے ایک روز قبل باغیوں نے قائم قصبے پر قبضہ کر لیا تھا جو شامی سرحد کے قریب واقع ہے۔

اس کے علاوہ عراق کے وزیرِ خارجہ ہوشیار زبیری نے بی بی سی کے جان سمپسن سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ’میں نے باضابطہ طور پر امریکی حکومت سے درخواست کی ہے کہ وہ ہمیں فضائی مدد فراہم کریں۔ عراق کے پاس فضائیہ نہیں ہے۔ عراق کے پاس ایک بھی جنگی طیارہ نہیں ہے۔‘

بغداد میں بی بی سی کے جان سمسپن نے بتایا کہ امریکہ کو داعش سے درپیش خطرے کا پہلے سے پتہ تھا مگر اس نے صرف دو ہفتے قبل ان کی کارروائیوں کی فضائی نگرانی کا کام شروع کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عراقی فوج کے بارے میں اطلاعات ہیں انھوں نے محفوظ راستے کی فراہمی پر اپنی چوکیاں خالی کر دیں

اتوار کو اطلاعات کے مطابق دفاعی لحاظ سے اہم شمالی شہر تل عفر کے ہوائی اڈے پر بھی داعش نے قبضہ کر لیا ہے۔

داعش کے جنگجوؤں نے عراق کے بڑے حصوں کو ایک دوسرے سے کاٹ دیا ہے، جس کا آغاز موصل پر قبضے کے بعد ہوا۔

باغیوں نے گذشتہ دنوں میں سٹریٹیجک لحاظ سے اہم قصبوں پر قبضہ کیا ہے جو سنی اکثریت کے صوبے انبار میں واقع ہیں جن میں قائم، رطبہ، رواہ اور عناہ شامل ہیں۔

باغیوں نے شامی سرحد پر واقع چوکی الولید جبکہ اتوار کو اردن کی سرحد پر واقع چوکی طریبل پر قبضہ کیا، جب حکومتی افواج وہاں سے پسپا ہو گئیں۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ اس قبضے کے نتیجے میں باغیوں کو ہتھیاروں کی ترسیل میں مدد ملے گی۔

عراقی کردستان کے شہر اربیل سے بی بی سی کے جم موئر کا کہنا ہے کہ کچھ دیر کے توقف کے بعد بغداد کے شمال اور شمال مشرقی جانب 75 کلومیٹر کے علاقے میں لڑائی ہوتی رہی ہے اور باغی دوبارہ حرکت میں ہیں۔

اب توجہ کچھ حد تک انبار پر ہے جو بغداد کے مغرب میں سنی اکثریتی صوبہ ہے اور جہاں قبائل کافی طاقتور ہیں۔

اردن اور شام کی سرحد پر واقع چوکیوں کے اطلاعات کے مطابق قبضے کامطلب ہے کہ عراقی حکومت کی عمل داری مغربی سرحد پر ختم ہو گئی ہے۔

ایک قبائلی رہنما کا کہنا ہے کہ صوبے کا 90 فیصد باغیوں کے ہاتھوں میں ہے اور اس ساری کارروائی کے آغاز سے قبل بغداد کے مغربی کنارے پر 30 کلومیٹر دور فلوجہ کے علاقے پر ان باغیوں کا جنوری سے قبضہ ہے اور اس کے ساتھ ہی صوبے کے دارالحکومت رمادی کے نصف حصے پر بھی قبضہ تھا۔

کئی مقامات پر فوجیوں اور پولیس نے اپنی چوکیوں کو چھوڑنے میں عافیت جانی جب باغیوں نے انھیں خون خرابے سے بچنے کے لیے محفوظ راستہ فراہم کیا۔

اتوار کو ایران کے روحانی پیشوا آیت اللہ علی خامنہ ای نے امریکہ کی عراق میں مداخلت کی مخالفت کی اور واشنگٹن پر الزام عائد کیا کہ ’وہ عراق پر اپنا قبضہ جمانا چاہتا ہے اور عراق پر اپنے چمچوں کے ذریعے حکومت کرنا چاہتا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مقتدیٰ الصدر کے حکم پر شیعہ ملیشیا نے بغداد کی سڑکوں پر عسکری قوت کا مظاہرہ کیا

انھوں نے کہا کہ ’عراق میں مرکزی تنازع ان لوگوں کے درمیان ہے جو عراق کو امریکہ کے کیمپ میں لے جانا چاہتے ہیں اور جو ایک آزاد عراق چاہتے ہیں۔‘

انھوں نے عراق میں فرقہ واریت کی بات کو مسترد کر دیا۔

امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری نے اتوار کو مصری دارالحکومت قاہرہ میں بات کرتے ہوئے عراقی رہنماؤں سے کہا کہ وہ ’فرقہ وارانہ ترغیبات سے بالاتر ہو کر حکومت بنائیں جو متحد ہو اور اس کا مطمحِ نظر عوام کی ضروریات پوری کرنا اور اس کی نمائندگی کرنا ہو۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption عراقی کردستان کی جانب سے کرد پیش مرگا باغیوں کے خلاف کارروائی کر رہی ہیں

رمادی میں موجود ایک اعلیٰ رہنما شیخ رعد السلیمان نے کہا کہ داعش نے اتنا بڑا علاقہ اس لیے قبضے میں لیا کیونکہ عراقی فوج لڑنے کو تیار نہیں تھی۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے مختلف سیاستدانوں اور سفارت کاروں کا کہنا تھا کہ جس طرح سرکاری فوجیں شدت پسندوں کے خلاف بے بس نظر آ رہی ہیں اس پر بغداد میں شدید مایوسی پائی جاتی ہے۔ ماہرین کے مطابق ایسا لگتا ہے کہ شدت پسندوں کے جنگجو سرکاری فوجیوں سے بہتر تربیت یافتہ ہیں اور ان کے پاس نہ صرف لڑنے کا بہتر تجربہ ہے بلکہ ان کے پاس فوج سے بہتر اسلحہ بھی موجود ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ non
Image caption ماہرین کے مطابق ایسا لگتا ہے کہ شدت پسندوں کے جنگجو سرکاری فوجیوں سے بہتر تربیت یافتہ ہیں

عراقی فضائیہ کے پاس موجود امریکی ’ہیل فائر‘ میزائل دو ہفتے پہلے ختم ہو گئے تھے اور فضائیہ کے پاس صرف دو ’سیسنا‘ طیارے ہیں جن سے یہ میزائل داغے جا سکتے ہیں۔ ماہرین کا مزید کہنا ہے کہ عراقی فضائیہ اگر طیاروں سے بمباری کرتی ہے تو اس سے عام شہریوں کے مارے جانے کا بھی خدشہ ہے۔

عراقی وزیرِاعظم نوری المالکی پر الزام لگتا رہا ہے کہ ان کی سنی مخالف پالیسیوں کی وجہ سے کچھ سنی شدت پسند جہادی تنظیم دولت اسلامی عراق و شام میں شامل ہوگئے ہیں اور عراقی فوجیوں کے خلاف جاری لڑائی میں حصہ لے رہے ہیں۔

اسی بارے میں