نائیجیریا: ابوجا میں بم دھماکہ، 21 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption حکومتی ترجمان مائیک اومری نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ یہ دھماکہ بم حملہ تھا

نائیجیریا کے دارالحکومت ابوجا میں ایک مصروف بازار میں ہونے والے ایک بم دھماکے میں 21 افراد ہلاک اور 52 زخمی ہو گئے ہیں۔

ضلع ووض کے بانیکس شاپنگ پلازہ میں زوردار بم دھماکہ ہوا جو کئی میل تک سنا گیا اور دھوئیں کے کالے بادل کئی میل تک دکھائی دیے۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس دھماکے کے سلسلے میں ایک شخص کو گرفتار کیا گیا ہے تاہم ابھی تک کسی گروہ نے اس کی ذمہ داری قبول نہیں کی۔

ماضی میں اسلامی شدت پسند تنظیم بوکو حرام نے ابوجا سمیت شمالی نائیجیریا میں متعدد حملے کیے ہیں۔

جائے وقوعہ کے قریب موجود چیاماکا اوہام نے بی بی سی کو بتایا کہ ’ہم نے ایک زوردار آواز سنی اور ہماری عمارت ہلنے لگی۔ جس کے بعد لوگوں میں بھگدڑ مچ گئی۔ ہم نے صرف دھواں اور خون میں لت پت لوگوں کو دیکھا۔‘

بی بی سی کی ہاؤسا سروس کے مدیر منصور لیمان نے بتایا کہ حملے کے وقت یہ بازار لوگوں سے بھرا ہوا تھا۔

ان کا کہنا ہے کہ ’دکانوں کے باہر کھڑی متعدد گاڑیاں جل گئیں اور کھڑکیوں کے شیشے ٹوٹ گئے۔‘

ایک شخص نے بی بی سی کو بتایا کہ ان کا ڈرائیور حملے میں ہلاک ہو گیا ہے: ’میں بازار میں تھا اور مجھے زمین ہلتی ہوئی دکھائی دی۔ میں نے اپنے ڈرائیور سمیت بہت سے لوگوں کو ہلاک ہوتے دیکھا۔‘

حکومتی ترجمان مائیک اومری نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ یہ دھماکہ بم حملہ تھا۔

بوکو حرام نے پہلے بھی ابوجا میں حملے کیے ہیں تاہم ان کی کارروائیوں کا مرکز ملک کا شمال مشرقی علاقہ رہا ہے۔

اپریل میں دارالحکومت کے نواحی علاقے میں ایک بس اڈے پر بم حملے میں 70 سے زیادہ افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ اس حملے کی ذمہ داری بوکو حرام نے قبول کی تھی۔

اس کے علاوہ تنظیم کا دعویٰ ہے کہ مئی کے مہینے میں 19 افراد کو ہلاک کرنے والا بم دھماکہ بھی انھوں نے ہی کیا تھا۔

بوکو حرام کی کارروائیاں اس وقت بین الاقوامی تشویش کا باعث بن گئی تھیں جب اس نے حال ہی میں شمالی نائیجیریا میں 200 کے قریب طالبات کو اغوا کر لیا تھا۔

اسی بارے میں