’صدر کی تصویر کی پوجا نہیں ہونی چاہیے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

کوسٹا ریکا کے نو منتخب صدر نے ایک حکم کے ذریعے سرکاری دفاتر میں اپنے نام کی تختی کے استعمال پر پابندی عائد کر دی ہے۔

صدر لیوئس سولس نے گذشتہ ماہ اپنے عہدے کا حلف اٹھایا تھا۔

صدر سولس کا کہنا تھا کہ وہ نہیں چاہتے کہ صدور کی تصاویر دفتروں لگانے کی عام روایت کی پیروی کرتے ہوئے ان کی تصویر بھی سرکاری دفاتر میں لٹکائی جائے۔

انھوں نے کہا کہ کوسٹاریکا میں میری حکومت کے دوران کم از کم صدر کی تصویر کی پوجا نہیں ہونی چاہیے۔

خیال رہے کہ لیوئس سولس گذشتہ 50 سے زائد برسوں میں کسی تیسری جماعت کے پہلے رہنما ہوں گے جنھیں کوسٹا ریکا میں حکومت کرنے کا موقع ملا ہے۔

کوسٹا ریکا کے صدر نے میڈیا کو بتایا کہ ان کے خیال میں پُلوں یا شاہراہوں کے افتتاح پر ان کے نام کی تختی لگانا بھی غلط خیال ہے۔

حکم نامے پر دستخط کرنے کے بعد انھوں نے میڈیا سے کہا کہ عمارتین ملک کے مزدور بناتے ہیں نہ کہ حکومت یا اس کا کوئی خاص اہلکار۔

لیوئس سولس نے ہدایت کی کہ مستقبل میں تکمیل ہونے والے کسی بھی منصوبے کی تختی پر اس منصوبے کی شروع کی جانے والی تاریخ درج کی جائے۔

خیال رہے کہ لیوئس سولس کی جماعت نے رواں برس فروری میں ہونے والے صدارتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں 31 فیصد ووٹ حاصل کر کے سب کو حیران کر دیا تھا۔

لیوئس سولس نے انتخابی مہم کے دوران ملک میں غیر ضروری اخراجات کم کرنے کا وعدہ کیا تھا اور ان کی جماعت نے کوسٹا ریکا کے انتخابات میں 78 فیصد ووٹ حاصل کیے۔

اسی بارے میں