فرانس کے سابق صدر نکولس سرکوزی گرفتار

نکولس سرکوزی تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption نکولس سرکوزی2007 سے 2012 تک فرانس کے صدر رہ چکے ہیں۔

فرانس کے سابق صدر نکولس سرکوزی کو مبینہ طور پر اپنے اثر رسوخ کے استعمال کے الزام میں حراست میں لیا گیا اوران سے باقاعدہ تفتیش کی گئی۔

پیرس میں انسدادِ بدعنوانی پولیس ٹیم نے ان سے 15 گھنٹے تک سوال و جواب کے بعد منگل کو دیر گئے انھیں ایک جج کے سامنے پیش کیا۔

سرکوزی کے وکیل تھيئری ہرزوگ اور سینيئر وکیل استغاثہ گلبرٹ کو بھی ان الزامات کے لیے باقاعدہ تفتیش میں رکھا گیا ہے۔

ایک دوسرے وکیل استغاثہ پیٹرک سیساسٹ کو بھی طلب کیا گیا تھا لیکن وہ منگل کی رات تک جج کے سامنے حاضر نہ ہو سکے۔

واضح رہے کہ جب کسی ملزم کو باقاعدہ تفتیش کے لیے لایا جاتا ہے تو اسے ایک جج کے ذریعے جانچا جاتا ہے جو یہ طے کرتا ہے کہ آیا اس پر مقدمہ چلانے کے لیے ثبوت اور شواہد کافی ہیں۔

جانچ کے اس عمل کے بعد عام طور پر عدالت میں مقدمہ چلایا جاتا ہے اور اس میں زیادہ سے زیادہ دس سال کی ‎قید اور ڈیڑھ لاکھ یورو جرمانہ لگایا جا سکتا ہے۔

سرکوزی کو مبینہ طور پر اپنا اثر رسوخ استعمال کرنے کے الزام میں حراست میں لیا گیا تھا اور دیر رات گئے جج کے سامنے حاضری کے بعد انھیں رہا کر دیا گیا۔

سابق صدر کو پیرس کے نزدیک حراست میں رکھا گیا ہے جہاں ان سے اس بارے میں پوچھ گچھ کی جا رہی ہے کہ آیا انھوں نے انتخابی مہم کی فنڈنگ سے متعلق تحقیقات کی اطلاعات حاصل کرنے کے لیے اپنا اثر و رسوخ استعمال کیا تھا۔

خیال ہے کہ ایسا پہلی مرتبہ ہوا ہے کہ فرانس کے کسی سابق صدر کو پولیس کی حراست میں رکھا گیا ہو۔

خیال ہے کہ اس تازہ واقعے کے بعد 2017 میں صدر کے عہدے کے لیے مسٹر سرکوزی کی کوششوں کو دھچکا لگے گا۔

تحقیق کار یہ جاننے کی کوشش کر رہے ہیں کہ کیا 59 سالہ سرکوزی نے ایک اعلٰی جج گلبرٹ ایزبرٹ کو موناکو میں ایک اہم عہدہ دینے کا وعدہ کیا تھا جس کے بدلے میں جج انھیں انتخابی مہم کی مبینہ غیر قانونی فنڈنگ کی تحقیقات کی تمام اطلاعات فراہم کرنے والے تھے۔

نکولس سرکوزی2007 سے 2012 تک فرانس کے صدر رہ چکے ہیں۔

اس بارے میں جج گلبرٹ ایزبرٹ سے بھی پوچھ گچھ کی گئی ہے۔گذشتہ دو سال میں فرانس کے لوگ اپنے سابق صدر کے بارے میں مختلف خبروں کے عادی ہو چکے ہیں جس سے سرگرم سیاست میں ان کی واپسی کی کوششیں متاثر ہوتی نظر آرہی ہیں۔

سرکوزی کے حامیوں کا کہنا ہے کہ تفتیش کار سیاسی مقاصد حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں جس کے پیچھے حکمران جماعت کا ہاتھ ہے کیونکہ جب بھی سرکوزی سرگرم سیاست کی جانب رخ کرنے کی کوشش کرتے ہیں میڈیا میں ان سے متعلق خبریں سر اٹھانے لگتی ہیں۔

تفتیش کار سرکوزی کو 24 گھنٹے تک حراست میں رکھ سکتے ہیں لیکن یہ مدت مزید ایک دن کے لیے بڑھائی بھی جا سکتی ہے۔

اسی بارے میں