نائجیریا: بوکو حرام کا دمباؤ شہر پر ’قبضہ‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گذشتہ برسوں میں بوکو حرام کی کارروائیوں میں شدت آئی ہے

نائجیریا کے اسلام پسند جنگجو گروپ بوکو حرام نے شمال مشرقی نائجیریا کے اہم شہر دمباؤ پر کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

یہ بات تحفظِ امن کے ایک مقامی کارکن نے بی بی سی کو بتائی۔

انھوں نے بتایا کہ شہر کی حفاظت پر تعینات مقامی محافظ اتوار کو شہر چھوڑ کر بھاگ نکلے اور اب شہر میں اسلامی گروپ بوکو حرام کا سیاہ پرچم لہرا رہا ہے۔

اس رہنما نے مزید بتایا کہ بوکو حرام نے جمعے کو دمباؤ شہر پر حملہ کیا تھا جس میں کم از کم 40 افراد مارے گئے۔

واضح رہے کہ یہ جنگجو گروہ سنہ 2009 سے نائجیریا میں اسلامی ریاست کے قیام کے لیے برسرِ پیکار ہے۔

رواں سال اپریل میں اس گروہ نے بورنو صوبے کے چیبوک شہر کے ایک اقامتی سکول سے 200 سے زیادہ طالبات کو اغوا کر کے عالمی پیمانے پر غم و غصے کو بھڑکا دیا تھا۔

یہ طالبات ابھی تک ان کے قبضے میں ہیں اور ان کی رہائی کے بارے میں حکومتی کوششیں ناکام رہی ہیں۔

دارالحکومت ابوجا میں بی بی سی کے نمائندے کرس ایوکور کا کہنا ہے کہ ماضی میں بھی بوکو حرام نے چند قصبوں اور شہروں پر قبضہ کر لیا تھا لیکن فوج نے انھیں وہاں سے نکال دیا تھا۔

تاہم ان کا کہنا ہے کہ فوج دمباؤ کو پھر سے اپنے قبضے میں لینے کے لیے کوئی کارروائی کرنے میں ناکام رہی ہے۔

واضح رہے کہ دمباؤ بورنو صوبے کے اہم ترین تجارتی شہروں میں سے ایک ہے اور علاقے کی اہم منڈی ہے۔

نائجیریا کے فوجی ترجمان کرس اولوکولادے نے کہا ہے کہ ’سرکاری افواج اس علاقے میں اپنی پوزیشن مضبوط کر رہی ہیں۔‘

انھوں نے کہا کہ ’یہ ملک بوکو حرام کو کوئی بھی حصہ دینے کے لیے تیار نہیں ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اپریل میں طالبات کے اغوا کے بعد بوکو حرام کے خلاف عالمی پیمانے پر مظاہرے ہوئے ہیں

انھوں نے کہا کہ تکنیکی خرابی کی وجہ سے ایک فوجی ہیلی کاپٹر صوبے میں تباہ ہو گيا ہے۔ تاہم انھوں نے اس میں ہلاکتوں کی تفصیل نہیں بتائی۔

ایک مقامی شخص نے بی بی سی کو بتایا کہ دمباؤ پر کنٹرول حاصل کرنے کی جنگ میں بجلی کی تنصیبات کو نقصان پہنچا ہے اور اس کی وجہ سے صوبائی دارالحکومت میڈوگوری کی بجلی معطل ہے۔

دمباؤ دارالحکومت میڈوگوری سے 85 کلومیٹر کے فاصلے ہے اور یہ بوکو حرام کا ہیڈکوارٹر تصور کیا جاتا ہے جہاں سے گذشتہ سال فوج نے انھیں نکال دیا تھا۔

ہیومن رائٹس واچ کا کہنا ہے نائجیریا میں کہ رواں سال 95 حملوں میں تقریباً دو ہزار شہری ہلاک ہو چکے ہیں۔

اسی بارے میں