امریکہ اور یورپ نے اسرائیل کے لیے پروازیں معطل کر دیں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption یورپ کی ایوی ایشن سیفٹی ایجنسی (ای اے ایس اے) نے بھی تل ابیب کے لیے پروازوں معطل کرنے کی استدعا کی ہے

امریکہ اور یورپی ایئر لائنز نے اسرائیل کے بین گوریان ہوائی اڈے سے ایک کلومیٹر کے فاصلے پر راکٹ گرنے کے بعد اسرائیل کے لیے اپنی پروازوں کو معطل کر دیا ہے۔

امریکہ کی فیڈرل ایوی ایشن ایڈمنسٹریشن (ایف ایف اے) نے تین امریکی فضائی کمپنیوں ڈیلٹا، یونائٹیڈ اور یو ایس ایئر ویز کو 24 گھنٹوں کے لیے اپنی پروازوں معطل کرنے کے احکامات جاری کیے ہیں۔

ادھر یورپ کی ایوی ایشن سیفٹی ایجنسی (ای اے ایس اے) نے بھی تل ابیب کے لیے پروازوں معطل کرنے کی استدعا کی ہے۔

دوسری جانب اسرائیلی وزیرِاعظم بنیامن نتن یاہو نے امریکی فیصلے پر ناراضی کا اظہار کرتے ہوئے اسرائیل کے لیے امریکی پروازوں کی دوبارہ بحالی کا مطالبہ کیا ہے۔

اسرائیلی وزیرِاعظم نے ایف ایف اے کی جانب سے عائد کی گئی پابندی ختم کروانے کے لیے امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری سے مدد مانگی ہے۔

اس سے قبل اسرائیل کی ٹرانسپورٹیشن وزارت نے ایک بیان میں کہا تھا کہ بین گوریان کا ہوائی اڈا محفوظ ہے اور اس کی مکمل حفاظت کی جا رہی ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا کہ امریکی کمپنیوں کی جانب سے پروازوں کی معطلی کی کوئی وجہ نہیں اور ایسا کرنا دہشت گردی کی حوصلہ افزائی کے مترادف ہو گا۔

دریں اثنا یورپ کی ایوی ایشن سیفٹی ایجنسی (ای اے ایس اے) نے ایک بیان میں کہا ہے کہ وہ اس بات کی سختی سے تائید کرتی ہے کہ یورپی ایئر لائنز تل ابیب آنے اور جانے والی پروازیں سے اجتناب کریں۔

خیال رہے کہ ای اے ایس اے کی جانب سے یہ بیان سامنے آنے سے پہلے ہی لفت ہانزا اور آسٹرین ایئر لائنز نے دو دنوں کے لیے اسرائیل کے لیے تمام پروازیں منسوخ کرنے کا فیصلہ کر لیا تھا۔

ادھر کے ایل ایم اور ایئر فرانس نے بھی ای اے ایس اے کے مشورے پر عمل کرتے ہوئے اسرائیل کے لیے اپنی پروازیں منسوخ کر دی ہیں۔

اس کے علاوہ ایئر کینیڈا، ایزی جیٹ اور اٹلی نے بھی اپنی پروازیں معطل کر دی ہیں۔

ڈیلٹا ایئر لائنز نے کہا ہے کہ اس کی نیویارک سے تل ابیب جانے والی پرواز کی سمت کو اسرائیلی پولیس کی جانب سے بین گوریان ہوائی اڈے کے قریب ایک راکٹ گرنے کی تصدیق کے بعد فرانس کی جانب موڑ دیا گیا۔

ڈیلٹا اور یونائٹیڈ ایئر لائنز نے کہا ہے کہ انھوں نے مستقبل قریب میں اسرائیل کے لیے اپنی پروازوں کو معطل کر دیا ہے تاہم یو ایس ایئر ویز کا کہنا ہے کہ انھوں نے اس بارے میں ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں کیا۔

اسی بارے میں