بیمار بچے کو سروگیٹ ماں کے پاس چھوڑنے پر غم و غصہ

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption تھائی لینڈ کے محکمۂ صحت کے ایک اہلکار نے بتایا کہ تھائی لینڈ میں سروگیٹ ماں کی خدمات لینے کے لیے رقم ادا کرنا غیر قانونی ہے

ایک آسٹریلوی جوڑے کی طرف سے تھائی لینڈ میں سروگیٹ یا کرائے کی ماں سے پیدا کیے جانے والے ایک بیمار بچے کو چھوڑنے اور اس کی صحت مند جڑواں بہن کو گود لینے پر لوگوں نے غم و غصے کا اظہار کیا ہے۔

ایک تھائی اخبار میں خبر چھپنے کے بعد لوگوں نے بچے کے لیے ہزاروں امریکی ڈالر کا چندہ جمع کیا ہے اور آسٹریلوی جوڑے کے اقدام پر شدید ردِ عمل ظاہر کیا ہے۔

آسٹریلوی جوڑے نے گامائے نامی چھ ماہ کے بچے کو جو ڈاؤن سینڈروم اور دل کے عارضے میں مبتلا ہے، پیدائش کے وقت ان کے تھائی سروگیٹ ماں کے ساتھ چھوڑ دیا تھا۔گامائے کی پرورش کی ذمے داری پھر ان کی سروگیٹ ماں پاتارامون چانبوا پر آن پڑی۔

خیال رہے کہ سروگیٹ ماں اس عورت کو کہا جاتا ہے جو اپنے پیٹ میں کسی کا بچہ پالتی ہے جو کہ اس کے بیضے سے ہو یا اسے کسی اور نے بارور کیا ہو۔

آسٹریلوی جوڑے نے جن کی شناخت معلوم نہیں، پاتارامون چانبوا کو سروگیٹ ماں کی خدمات دینے کے لیے 15 ہزار امریکی ڈالرادا کیے تھے۔

جب چانبوا چار ماہ کی حاملہ تھیں تو انھیں بچے کی صحت اور بیماری کے بارے میں بتا دیا گیا تھا اور آسٹریلوی جوڑے نے انھیں حمل ضائع کرنے کے لیے کہا تھا لیکن انھوں نے یہ کہہ کر انکار کیا تھا کہ حمل ضائع کرنا ان کے بدھ مت کے عقیدے کے منافی ہے۔

21 سالہ چانبوا نے جو پہلے ہی سے دو بچوں کی ماں ہیں وہ گامائے کے علاج کا خرچہ برداشت نہیں کر سکتیں۔ انھوں نے آسٹریلوی ٹی وی اے بی سی کو بتایا کہ ’جو رقم مجھے دی گئی تھی وہ مجھے بہت زیادہ لگ رہی تھی۔ میرے ذہن میں تھا اس رقم سے ہم اپنے بچوں کو تعلیم دے سکیں گے اور اپنا قرضہ بھی ادا کر دیں گے۔‘

ایک تھائی اخبار نے گذشتہ ہفتے گامائے کے بارے میں خبر شائع کی تھی جس کے بعد علاج کے لیے رقم جع کرنے کی ایک آن لائن مہم شروع کی گئی ہے۔

اس مہم کے دوران بہت سے لوگوں نے چندہ دیا اور اب تک 120000 امریکی ڈالر سے زیادہ چندہ جمع ہو گیا ہے۔ بہت سے لوگوں نے گامائے کے ساتھ ہمدردی کے اور آسٹریلوی جوڑے کے رویے پر غم و غصے سے بھرے پیغامات بھی بھیجے۔

ایک ہمدرد نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ’اس بے رحم اور خود غرض جوڑے کو اس بہیمانہ حرکت پر بے نقاب کر کے سرِ عام شرمندہ کیا جانا چاہیے۔‘

آسٹریلوی محکمۂ خارجہ کے ایک ترجمان نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ ’انھیں ان اطلاعات پر تشویش ہے اور وہ تھائی حکومت کے ساتھ سروگیٹ کے معاملے پر مشورہ کر رہے ہیں۔‘

تھائی لینڈ کے محکمۂ صحت کے ایک اہلکار نے بتایا کہ تھائی لینڈ میں سروگیٹ ماں کی خدمات لینے کے لیے رقم ادا کرنا غیر قانونی ہے۔

انھوں نے کہا کہ ’تھائی لینڈ میں قانون کے مطابق سروگیٹ ماں کی خدمات لی جا سکتی ہیں۔ سروگیٹ ماں کا اولاد کے خواہش مند والدین کا رشتہ دار ہونا لازمی ہے اور اس میں کسی قسم کی رقم کی ادائیگی نہیں ہوتی۔‘

اسی بارے میں