اسرائیل اور حماس کا جنگ بندی پر اتفاق

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption غزہ میں آٹھ جولائی کو شروع ہونے والی کشیدگی میں تقربیاً 1960 افراد ہلاک ہو چکے ہیں

مصر میں اتوار کو سفارتی کوششوں کے بعد حماس اور اسرائیل تین دن کے لیے جنگ بندی پر رضامند ہو گئے ہیں۔

جنگ بندی پر عمل درآمد اتوار اور پیر کی درمیانی شب کو گرینج کے معیاری وقت کے مطابق نو بجے شروع ہو گیا ہے۔

توقع کی جا رہی کہ 72 گھنٹے کی جنگ بندی کے دوران مذاکرات کاروں کو طویل المدتی جنگ بندی کرانے کا موقع ملے گا۔

اس سے پہلے گذشتہ ہفتے مصر کی مدد سے ہونی والی جنگ بندی کے تین روز بعد فریقین میں لڑائی دوبارہ شروع ہو گئی تھی۔

اقوام متحدہ کے مطابق آٹھ جولائی کو شروع ہونے والی کشیدگی میں تقریباً1935 فلسطینی مارے جا چکے ہیں اور ان میں عورتوں اور بچوں سمیت کم از کم 1408 عام شہری ہیں۔

اس کے علاوہ اسرائیل 64 فوجی، دو عام شہری اور اسرائیل میں موجود ایک تھائی شہری ہلاک ہو چکا ہے۔

گذشتہ ہفتےاقوام متحدہ اور امریکہ نے غزہ میں پھر سے تشدد کی شروعات کی مذمت کرتے ہوئے دونوں فریقوں پر زور دیا تھا کہ پرتشدد کارروائیوں روک کر مذاکرات کے ذریعے پائیدار امن کی کوششیں کریں۔

اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل نے کہا تھا کہ عام شہریوں کی مزید ہلاکتیں ناقابل برداشت ہیں۔

اسی بارے میں