غزہ پر اسرائیلی حملے جاری، مزید تین ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اسرائیلی حملوں میں اب تک دو ہزار سے زائد فلسطینی مارے جا چکے ہیں

اسرائیلی وزیرِ اعظم کی جانب فلسطین میں حملوں میں تیزی لانے کے احکامات کے بعد غزہ پر جنگی طیاروں کے حملے میں مزید تین افراد مارے گئے ہیں۔

فلسطین کے طبی عملے اور عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ یہ ہلاکتیں وسطی غزہ میں اس وقت ہوئیں جب ایک مکان بمباری کا نشانہ بنا۔

اس سے قبل فلسطینی حکام نے جمعے کو چار ہلاکتوں کی تصدیق کی تھی۔

فلسطین پر حالیہ اسرائیلی حملوں کے آغاز کے بعد سے دو ہزار نوّے فلسطینی اور 67 اسرائیلی ہلاک ہو چکے ہیں۔ ہلاک ہونے والے فلسطینیوں میں سے بیشتر عام شہری تھے جبکہ اسرائیلی ہلاک شدگان فوجی تھے۔

اسرائیل کے وزیرِ اعظم بن یامین نتن یاہو نے غزہ سے کیے جانے والے مارٹر حملے میں ایک اسرائیلی لڑکے کی ہلاکت کے بعد عسکری کارروائیوں میں شدت لانے کا اعلان کیا تھا۔

اسرائیلی حکام کا کہنا ہے کہ جمعے کو فلسطین سے اسرائیل پر 80 سے زیادہ راکٹ داغے گئے جبکہ اس نے جواب میں 30 فضائی حملے کیے جن میں سے ایک میں غزہ شہر میں ایک مکان تباہ ہوا جس سے 40 سے زیادہ افراد زخمی ہوئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حماس لڑکے کی ہلاکت کی بھاری قیمت ادا کرے گی:نتن یاہو

وزیرِ اعظم کے ترجمان اوفیرگینڈلمین نے ٹوئٹر پر ان کے حوالے سے کہا ہے کہ ’حماس لڑکے کی ہلاکت کی بھاری قیمت ادا کرے گی۔‘

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ اسرائیلی افواج اور شن بیت سکیورٹی سروس حماس کے خلاف آپریشن میں تیزی لائیں گے تاکہ اسرائیلی کارروائی کا اصل مقصد حاصل کیا جا سکے۔

جمعرات کو اسرائیل نے فضائی حملوں میں حماس کے تین کمانڈر ہلاک کیے تھے۔

اطلاعات کے مطابق جمعے کو حماس نے ایسے 18 افراد کو بھی ہلاک کیا ہے جن پر اسرائیل کے لیے کام کرنے کا الزام تھا۔

حماس کے ذرائع نے خبر رساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ 11 افراد کو ایک غیرآباد پولیس سٹیشن میں ہلاک کیا گیا جبکہ عینی شاہدین کے مطابق بقیہ سات کو حماس کی وردیوں میں ملبوس افراد نے وسطی غزہ میں العمری مسجد کے سامنے گولیاں ماریں۔

اسی بارے میں