’ آسٹریلیا دولت اسلامیہ کے خلاف 600 فوجی فراہم کرے گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption دولت اسلامیہ کے خلاف بھیجے جانے والے فوجیوں کے ہمراہ آٹھ سپرہارنٹ فائٹر جیٹ ہوں گے

آسٹریلیا نے کہا ہے کہ عراق میں دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں کے خلاف امریکہ کی قیادت میں ممکنہ آپریشن کے لیے اپنے 600 فوجی مشرق وسطیٰ بھیج رہا ہے۔

آسٹریلوی وزیر آعظم ٹونی ایبٹ نے کہا کہ ان فوجیوں کو ابتدا میں متحدہ عرب امارات میں تعینات کیا جائے گا اور یہ کہ انھیں امریکہ کی مخصوص درخواست پر بھیجا جا رہا ہے۔

دس عرب ممالک سمیت تقریباً 40 ممالک نے شدت پسند دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں سے نمٹنے کے لیے امریکی قیادت میں ایک منصوبے پر دستخط کیے ہیں۔

دریں اثنا امریکی وزیر خارجہ جان کیری دولت اسلامیہ کے خلاف اتحاد تیار کرنے کے لیے مشرق وسطی کے چار دنوں کے دورے کے بعد اتوار کو پیرس پہنچ گئے ہیں۔

واضح رہے کہ فرانس پیر کو علاقائی سکیورٹی پر ایک اجلاس منعقد کر رہا ہے۔

تاہم امریکہ نے اس کانفرنس میں اہم علاقائی ملک ایران کی شرکت کو مسترد کردیا ہے جس پر ایران نے ان مذاکرت کو ’محض نمائش‘ کہہ کر رد کر دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پیرس پہنچنے سے قبل جان کیری نے مصری صدر اور عرب لیگ کے صدر سے قاہرہ میں ملاقات کی تھی

گذشتہ ہفتے صدر اوباما نے عراق اور شام میں دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں سے لڑنے کی حکمت عملی پیش کی تھی۔

امریکی درخواست کے جواب میں اتوار کو مسٹر ایبٹ نے کہا کہ عراق نے واضح طور پر کہا ہے کہ ’ملک میں سکیورٹی کی بحالی کی کوششوں میں تعاون کا وہ خیرمقدم کرے گا۔‘

انھوں نے کہا کہ ان فوجیوں کے پاس آٹھ سوپر ہارنٹ فائٹر جیٹ ہوں گے اور ’یہ محظ امریکی آسٹریلوی آپریشن نہیں ہے۔‘

امریکی خفیہ ادارے سی آئی اے کا کہنا ہے کہ دولت اسلامیہ یعنی آئی ایس عراق اور شام میں بڑے حصے پر قابض ہے اور اس کے تقریباً 30 ہزار جنگجو ہیں۔

امریکی فضائی حملے نے آئی ایس کو عراق میں نشانہ بنایا ہے اور صدر اوباما نے دو امریکی صحافیوں کے قتل کے بعد اس گروپ کو ختم کرنے کا عہد کیا ہے۔

دریں اثنا سنیچر اور اتوار کی درمیانی شب دیر رات جاری کی جانے والی ایک ویڈیو میں ایک برطانوی مغوی ڈیوڈ ہینز کے قتل کو دکھایا گيا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption سی آئی اے کا کہنا ہے کہ دولت اسلامیہ یعنی آئی ایس عراق اور شام میں بڑے حصے پر قابض ہے اور اس کے تقریباً 30 ہزار جنگجو ہیں

مسٹر کیری پیرس کے ڈی گال ایئر پورٹ پر قاہرہ سے پہنچے جہاں انھوں نے مصری صدر عبدالفتاح السیسی اور عرب لیگ کے سربراہ نبیل العربی سے ملاقات کی۔

انھوں نے کہا کہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ سے نمٹنے میں مصر کا اہم کردار رہے گا۔

پیر کو فرانسیسی صدر فرانسوا اولاند عراق کی سکیورٹی کے معاملے پر 20 ممالک سے آنے والے سفارتکاروں کا خیرمقدم کریں گے۔

یہ اجلاس اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے آئندہ ہفتے ہونے والے اجلاس سے قبل ہو رہا ہے اور پھر اس کے بعد اسی ماہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کا اجلاس ہونے والا ہے جہاں ساری دنیا کے سربراہان مملکت یکجا ہوں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption دولت اسلامیہ کے بحران کی وجہ سے عراق میں تقریباً 12 لاکھ افراد بے گھر ہوئے ہیں

اس اجلاس میں ایک اہم ملک جو شرکت نہیں کررہا ہے وہ ایران ہے اور اس نے مخصوص مہمانوں کی فہرست میں شامل نہ کیے جانے پر اپنی ناخوشی ظاہر کی ہے۔

نائب وزیر خارجہ حسین عامر عبدالاہیان نے سرکاری ٹی کو بتایا کہ ’ایران کو دہشتگردی کے خلاف حقیقی جنگ میں دلچسپی ہو سکتی ہے نہ کہ منتخب جنگ میں۔‘

اسی بارے میں