فالوجہ میں ایک ہپستال سرکاری فوج کا نشانہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فلوجہ پر گزشتہ سال دولت اسلامیہ نے قبضہ کر لیا تھا

عراق کے شہر فالوجہ میں دولت اسلامیہ کے زیر تسلط علاقے میں ایک ہسپتال عراق کی سرکاری فوج کی بمباری میں نشانہ بن گیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق یہ ہسپتال عراقی وزیر اعظم حیدر العابدی کی طرف سے جاری ہونے والے اس بیان کے ایک روز بعد نشانہ بنا جس میں انھوں نے دولت اسلامیہ کے زیر قبضہ شہری علاقوں پر بمباری کرنے سے منع کیا تھا۔

ہسپتال کے طبی عملے نے بی بی سی کو بتایا کہ عملے کا ایک رکن بھی اس حملے میں شدید زخمی ہو گیا ہے۔

فالوجہ اور رمادی کا کہنا ہے کہ وہ جہادیوں کے بجائے سرکاری فوج کی بمباری سے زیادہ خطرہ محسوس کرتے ہیں۔

سنی اکثریتی صوبے انبار میں واقع ان دونوں شہروں پر دولت اسلامیہ نے دسمبر 2013 میں قبضہ کر لیا تھا۔

طبی عملے میں شامل ایک شحض نے بی بی سی عربی کو بتایا کہ پانچ کلو میٹر دور ایک فوجی اڈے سے داغے جانے والے چار میزائیل ہسپتال پر گرے۔ عراقی ذرائع ابلاغ میں اس سلسلے میں معتضاد خبریں گردش کر رہی ہیں۔

اسی بارے میں