روس نواز باغیوں کے لیے عام معافی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مشرقی یوکرین میں پانچ ستمبر سے سیز فائر پر عمل درآمد ہو رہا ہے

روس اور یوکرین کے درمیان ہونے والے جنگ بندی کے معاہدے کے تحت، یوکرین کی پارلیمنٹ نے روس نواز باغیوں کو عام معافی اور ان کے زیر کنٹرول علاقوں کو خود مختاری دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

روس نواز باغی رواں سال اپریل میں مشرقی دونتسک اور لوہانسک کے کچھ قصبوں پر قابض ہونے کی بعد سے یوکرین کی فوج سے لڑ رہے ہیں۔ یوکرین اور مغربی ممالک روس پر باغیوں کی مدد کا الزام لگاتے رہے ہیں لیکن ماسکو ان الزامات کی تردید کرتا آیا ہے۔

اقوام متحدہ کے مطابق یوکرین میں پانچ ماہ سے جاری لڑائی میں اب تک تین ہزار افراد ہلاک جب کہ تین لاکھ سے زیادہ بے گھر ہو چکے ہیں۔

عام معافی کا اعلان تمام روس نواز باغیوں پر ہو گا ماسوائے ان کے جو کہ ملائیشیا کے مسافر بردار طیارے ایم ایچ 17 کو مار گرانے میں کسی طرح ملوث ہوں۔

مغربی ممالک کو یقین ہے کہ اس طیارے کو روس نواز باغیوں نے گرانے کے لیے روسی ساختہ میزائل کا استعمال کیا تھا۔ لیکن روس اور ان کے حامی باغی ان الزامات کو مسترد کرتے آئے ہیں۔

باغیوں کی طرف سے کیے گئے سنگین جرائم پر بھی اس معافی کا اطلاق نہیں ہو گا۔

تاریخی دن:

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption گزشتہ سال کیف میں ہونے والے مظاہروں کے بعد یوکرین کی گزشتہ حکومت کو مستعفیٰ ہونا پڑا

یوکرین اور یورپی یونین کے صدور نے آج کے دن کو تاریخی قرار دیا ہے لیکن روس اور یوکرین کے درمیان پانچ ستمبر کو ہونے والے جنگ بندی کے معاہدے کے بعد آزاد تجارت پر ہونے والے اتفاق کو دو ہزار سولہ تک ملتوی کر دیا گیا ہے۔

یوکرین میں ابھی بھی یہ خوف موجود ہے کہ شاید روس اس معاہدے سے پیچھے ہٹ جائے۔

قیدیوں کی رہائی:

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption مشرقی یوکرین میں لڑائی سے کاروبار اور صنعتیں متاثر ہوئی ہیں

عام معافی کے قانون کے تحت لڑائی میں حصہ لینے والے ان تمام روس نواز باغیوں کو جو کہ اس وقت زیر حراست ہیں، رہا کر دیا جائے گا۔

اسی طرح باغی بھی ان کے قید میں موجود یوکرینی فوجیوں کو رہا کرنے، زیر کنٹرول عمارات کو خالی کرنے اور ہتھیار ڈالنے کی شرائط پر عمل کریں گے۔

لیکن باغی اپنے لیے ایک علیحدہ ریاست ’نوووروسیا‘ کا قیام چاہتے ہیں اور اس مطالبے کا روسی صدر بھی اپنی تقاریر میں ذکر کر چکے ہیں۔

اسی بارے میں