سکاٹ لینڈ میں آزادی کے سوال پر ووٹنگ جاری

تصویر کے کاپی رائٹ GETTY IMAGES
Image caption برطانیہ کی تمام سیاسی قیادت اس کوشش میں ہے کہ سکاٹ لینڈ کے عوام کو قائل کر سکیں کہ وہ برطانیہ سے علیحدگی اختیار نہ کریں

سکاٹ لینڈ میں برطانیہ سے علیحدگی حاصل کرنے یا ساتھ رہنے کے فیصلے پر ریفرینڈم جاری ہے۔

اس ریفرینڈم میں ووٹروں سے سوال پوچھا گیا ہے کہ کیا سکاٹ لینڈ کو آزاد ملک ہونا چاہیے اور اس پر ووٹرز ’ہاں‘ یا ’نہ‘ میں جواب دیں گے۔

سکاٹ لینڈ کی برطانیہ سے علیحدگی کے لیے ریفرینڈم آج

اس ریفرینڈم میں 42 لاکھ 85 ہزار 323 رجسٹرڈ ووٹر حاصل لے رہے ہیں اور ٹرن آؤٹ زیادہ رہنے کی توقع ہے۔

ملک بھر میں ووٹر 2608 پولنگ سٹیشنوں پر ووٹ ڈال سکیں گے اور پولنگ مقامی وقت کے مطابق رات دس بجے تک جاری رہے گی جبکہ نتائج جمعے کی صبح تک متوقع ہیں۔

اس سے پہلے دو تازہ ترین جائزوں میں کہا گیا ہے کہ آزادی کے مخالفین کو معمولی سی برتری حاصل ہے۔

سکاٹ لینڈ کی آزادی کے حمایتیوں نے گلاسگو سینٹر میں ایک بڑا اجتماع کیا اور لوگوں کو ’ہاں‘ میں ووٹ ڈالنے کو کہا۔ ان کے قریب ہی آزادی کے مخالفین نے اجتماع کیا اور کہا کہ برطانیہ سے آزادی کے حق میں دلائل کمزور ہیں۔

برطانوی اخبارات دا سن اور دا ٹائمز کے لیے کیے گئے سروے کے مطابق 48 فیصد لوگ آزادی کے حق میں ہیں جبکہ 52 فیصد افراد اس کے مخالف ہیں۔ تاہم اس سروے میں چھ فیصد ایسے افراد ہیں جنھوں نے ابھی تک فیصلہ نہیں کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption تین اخباروں نے سکاٹ لینڈ کے ریفرینڈم کے بارے میں تین سروے شائع کیے ہیں

ڈیلی ریکارڈ کے لیے کیے جانے والے ایک اور سروے کے مطابق آزادی کے مخالفین 53 فیصد جبکہ حق میں 47 فیصد افراد ہیں جبکہ نو فیصد ایسے افراد ہیں جنھوں نے ابھی فیصلہ نہیں کیا۔

مہم کے آخری روز ایلیکس سیمنڈ نے سکاٹ لینڈ کے لوگوں کے نام ایک خط میں کہا کہ اپنے ملک کے مستقبل کا فیصلہ کرنے کا اختیار ان کے ہاتھوں میں ہے۔

یاد رہے کہ منگل کو برطانیہ کی تین مرکزی سیاسی جماعتوں کے سربراہان نے ایک عہد پر دستخط کیے تھے جس میں کہا گیا ہے کہ اگر سکاٹ لینڈ کے لوگ برطانیہ سے علیحدہ نہ ہونے کا فیصلہ کریں تو سکاٹ لینڈ کو مزید اختیارات دیے جائیں گے۔

یہ عہد برطانوی اخبار ڈیلی ریکارڈ میں شائع ہوا جس پر ڈیوڈ کیمرون، ایڈ ملی بینڈ اور نک کلیگ کے دستخط ہیں۔

واضح رہے کہ سکاٹ لینڈ کی برطانیہ سے علیحدگی کے حامیوں کا کہنا ہے کہ سکاٹ لینڈ کو مزید اختیارات صرف اسی صورت میں مل سکتے ہیں اگر برطانیہ سے علیحدگی اختیار کر لی جائے۔

اس عہد کے تین حصے ہیں۔ پہلے حصے میں وعدہ کیا گیا ہے کہ سکاٹ لینڈ کی پارلیمان کو ’وسیع اختیارات‘ ایک ’عمل کے ذریعے اور طے شدہ وقت‘ پر دیے جائیں گے۔ اس عمل اور ٹائم ٹیبل کا فیصلہ تینوں جماعتوں کے سربراہان کریں گے۔

Image caption سکاٹ لینڈ کے وزیراعلیٰ ایلیکس سیمنڈ نے کہا تھا کہ سکاٹ لینڈ کے ریفرینڈم میں آزادی کے حق میں فیصلہ دے کر عوام نئی تاریخ رقم کرنے جا رہے ہیں

دوسرے حصے میں کہا گیا ہے کہ تینوں سربراہان اس بات پر متفق ہیں کہ وسائل کی منصفانہ تقسیم کے ذریعے ہی برطانیہ اس بات کو یقینی بنا سکتا ہے کہ سب کے لیے مواقع اور سکیورٹی فراہم کی جائے۔

11 ستمبر 1997 یعنی آج سے ٹھیک 17 برس قبل سکاٹ لینڈ کے عوام نے اختیارات کی تقسیم کے حق میں ووٹ دیا تھا جس کے نتیجے میں تین سو سال کے طویل عرصے کے بعد سکاٹش پارلیمنٹ کا قیام عمل میں آیا تھا۔

تیسرے حصے میں کہا گیا ہے کہ ہیلتھ سروس این ایچ ایس کی فنڈنگ کے بارے میں حتمی فیصلہ سکاٹ لینڈ کی حکومت ہی کا ہو گا۔

وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون اور قائد حزب اختلاف ایڈ ملی بینڈ سمیت برطانیہ کی تمام سیاسی قیادت اس کوشش میں ہے کہ سکاٹ لینڈ کے عوام کو قائل کر سکیں کہ وہ برطانیہ سے علیحدگی اختیار نہ کریں۔

برطانوی شاہی محل بکنگھم پیلس کے ذرائع کا کہنا ہے کہ سکاٹ لینڈ کے برطانیہ کے ساتھ رہنے یا علیحدگی کا فیصلہ ’سکاٹ لینڈ کے عوام کے ہاتھ‘ میں ہے اور ملکہ برطانیہ ریفرینڈم پر اثر انداز نہیں ہونا چاہتیں۔

تاہم سوال پیدا ہوتا ہے کہ اگر سکاٹ لینڈ علیحدگی کا فیصلہ کرتا ہے تو برطانیہ کی شمالی سرحد کے پار ملکہ کے کردار پر کیا اثر پڑے گا۔

یورپ میں ماہرین کا کہنا ہے کہ سکاٹ لینڈ کی علیحدگی سے یورپ میں چلنے والی علیحدگی کی تحریکوں یا خواہشوں میں شدت آئے گی۔

اسی بارے میں