’ہیپی‘ ہونے پر 91 کوڑوں کی سزا

تصویر کے کاپی رائٹ Youtube
Image caption ویڈیو میں شرکت کرنے والوں کا کہنا ہے کہ انھیں دھوکا دیاگیا ہے

امریکی پاپ گلوکار فیرل ولیمز کے مشہور گانے ’ہیپی‘ پر ڈانس ویڈیو بنانے والے چھ گرفتار ایرانیوں کو ایک سال قید اور 91 کوڑوں کی سزا سنائی گئی ہے۔

ان کے وکیل کا کہنا ہے کہ ان کی سزاؤں کو تین سال کے لیے معطل کر دیا گیا ہے جس کا مطلب ہے کہ ان کو جیل تب تک نہیں بھیجا جائے گا جب تک وہ اس طرح کے جرم کا دوبارہ ارتکاب نہیں کرتے۔

ویڈیو میں تین مرد اور سر پر سکارف کے بغیر تین خواتین تہران کی سڑکوں اور چھتوں پر رقص کرتے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں۔

چھ ماہ میں ان چھ ایرانیوں کی ڈانس ویڈیو یوٹیوب پر دس لاکھ سے زیادہ مرتبہ دیکھی جا چکی ہے۔

وکیل فرشید رفوگرن نے ایرانی خبر رساں ادارے ’ایران وائر‘ کو بتایا کہ ویڈیو میں شامل لوگوں کی اکثریت کو چھ ماہ کی قید کی سزا دی گئی جبکہ ایک رکن کو ایک سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

’ہیپی وی آر فرم ایران‘ نامی ویڈیو مئی میں ایرانی حکام کی توجہ میں لائی گئی جب اس کو 150,000 سے زیادہ مرتبہ دیکھا جا چکا تھا۔

Image caption پاپ گلوکار فیرل ولیمز نے بھی ان افراد کی گرفتاری پرافسوس کا اظہار کیا

ایرانی پولیس نے ویڈیو میں دکھائے گئے افراد کو ملک کے اسلامی قوانین کی خلاف ورزی کرنے پرگرفتار کیا تھا۔ یاد رہے کہ ایرانی قوانین کے مطابق مردوں اور خواتین کا ایک دوسرے کے ساتھ رقص کرنا ممنوع ہے اور خواتین کو سر پر سکارف کے بغیر گھر سے نکلنا بھی منع ہے۔

گرفتاری کے بعد ملزمان ایران کے سرکاری ٹی وی پر لائے گئے تھے جہاں ان کا کہنا تھا کہ وہ اداکار تھے جن کو ’ہیپی‘ کی ویڈیو کے لیے بطور اداکار منتخب کیا گیا تھا اور اس کے لیے ان کے انٹرویوبھی لیے لیے گئے تھے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ان کے ساتھ دھوکا ہوا ہے۔

ان کی گرفتاریوں سے سوشل میڈیا پر ہل چل مچ گئی تھی اور انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں ان کو چھڑانے کی مہم بھی چلائی تھی۔

فیرل ولیمز، جن کے گانے ’ہیپی‘ کو اس سال آسکر ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا، نے بھی ان گرفتاریوں پر احتجاج کیا تھا۔

انھوں نے اپنے فیس بک پر لکھا تھا کہ ’یہ بہت افسوس کی بات ہے کہ ان بچوں کو خوشی کا پیغام پھیلانے کی وجہ سےگرفتار کیا گیا۔‘

اسی بارے میں