بھارت اور امریکہ کا نیوکلیئر سمجھوتے پر عمل درآمد کا عہد

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption دونوں رہنماؤں کے درمیان عراق اور شام میں سرگرم دولتِ اسلامیہ کے خلاف جنگ کے حوالے سے بھی بات ہوئی

بھارت کے وزیرِ اعظم نریندر مودی اور امریکی صدر براک اوباما نے منگل کو ملاقات میں دو طرفہ تعلقات کو ’نئی سطح‘ پر لے جانے اور سول نیوکلیئر سمجھوتے پر عمل درآمد کےلیے رکاوٹیں دور کرنے کا عہد کیا ہے۔

بھارتی خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے مطابق دونوں رہنماؤں کے درمیان یہ پہلا سربراہی اجلاس تھا جس میں انسدادِ دہشت گردی کے حوالے سے تعاؤن کرنے پر بھی اتفاق کیا گیا۔

یہ ملاقات واشنگٹن کے اول آفس میں ہوئی جس میں دونوں رہنماؤں کے درمیان معاشی تعاؤن، تجارت اور سرمایہ سمیت دیگر مختلف معاملات پر بات چیت ہوئی۔

صدر براک اوباما کے ساتھ تقربیاً ایک گھنٹے تک جاری رہنے والی ملاقات کے دوران نریندر مودی نے بھارت کے خدمات کے شعبے کو امریکی منڈی تک رسائی دینے کا مطالبہ بھی کیا۔

دونوں رہنماؤں کے درمیان عراق اور شام میں سرگرم دولتِ اسلامیہ کے خلاف جنگ کے حوالے سے بھی بات ہوئی۔

ملاقات کے بعد صدر اوباما نے صحافیوں سے گفتگو میں وزیرِ اعظم نریندر مودی کی معاشی ترقی اور غریبوں کی ضرویات پر توجہ دینے کی وجہ سے تعریف کی۔

صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے وزیرِ اعظم نریندر مودی نے اشارہ دیا کہ شاید بھارت تجارت کے فروغ کے لیے ورلڈ ٹریڈ آرگنائزیشن کے معاہد کی توسیق کر دے۔ بھارت نے جولائی سے اس معاہدے کو روک لیا ہے۔

نریندر مودی اس معاہدے میں ایسا استثنا چاہتے ہیں جس کے تحت بھارت خوراک کو ذخیرہ کر سکے اور غریبوں کو اسے رعایتی قیمتوں پر فروخت کر سکے۔

اسی بارے میں