سیئرا لیون: ہرگھنٹے میں ایبولا کے پانچ کیسز

سیئرالیون تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایبولا کے کیسوں میں تیزی سے اضافہ دیکھنے میں آیا ہے

ایک سرکردہ فلاحی تنظیم نے کہا ہے کہ سیئرا لیون میں ہر ایک گھنٹے میں ایبولا وائرس کے پانچ نئے کیسوں سے ظاہر ہوتا ہے کہ صحت کی سہولتوں کی طلب ترسیل سے کہیں کم ہے۔

سیو دا چلڈرن کا کہنا ہے کہ گذشتہ ہفتے ایبولا کے 765 نئے کیس رپورٹ کیے گئے ہیں جب کہ مریضوں کے لیے ملک میں صرف 327 بستر ہیں۔

ماہرین اور سیاست دان اس بحران کے عالمی ردِعمل پر بحث کے لیے لندن میں اکٹھے ہو رہے ہیں۔

اس وائرس سے اب تک 3,338 افراد ہلاک ہو چکے ہیں اور یہ دنیا میں اس وائرس کا سب سے بڑا پھیلاؤ ہے۔ ابھی تک 7,178 کیسوں کی تصدیق ہو چکی ہے اور ان کی اکثریت سیئرا لیون، لائبیریا اور گنی میں ہے۔

سیو دا چلڈرن کا کہنا ہے کہ سیئرا لیون میں ایبولا خطرناک شرح سے پھیل رہا ہے اور ہر ہفتے مریضوں کی تعداد دوگنا ہو رہی ہے۔

تنظیم کے چیف ایگزیکٹیو جسٹن فورستھ کہتے ہیں کہ اس بیماری سے نمٹنے کے لیے بہت کم وقت رہ گیا ہے۔

بی بی سی کے پروگرام ’ٹوڈے‘ میں بات کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ اگر فوری اقدامات نہ کیے گئے تو اس ماہ کے آخر تک سیئرا لیون میں مریضوں کی تعداد بڑھ کر ہر گھنٹے میں دس ہو جائے گی۔

دریں اثنا ایبولا کی روک تھام کے لیے اقوامِ متحدہ کے مشن کے سربراہ نے کہا ہے کہ یہ بیماری بہت تیزی سے پھیل رہی ہے اور اس بحران سے نمٹنے کے لیے وسیع پیمانے پر بین الاقوامی ردِ عمل کی ضرورت ہے۔

لائبیریا میں موجود اقوامِ متحدہ کے ایبولا سے متعلق رابطہ کار اینتھونی بینبری کا کہنا تھا کہ دور دراز کے علاقوں میں لوگوں کو اپنے آپ کو اس انفیکشن سے بچانے کے طریقوں کی تعلیم دینے کے لیے ابھی بہت کچھ کرنا ضروری ہے۔

’ہر 20 دن کے بعد کیسوں میں دو گنا اضافہ ہو رہا ہے۔ یہ بیماری لائبیریا کے ہر ضلعے تک پہنچ چکی ہے۔‘

برطانیہ نے اس سے پہلے کہا تھا کہ وہ سیئرا لیون میں 700 بستروں کی سہولت فراہم کرے گا لیکن اس میں ابھی ہفتے اور مہینے لگ سکتے ہیں۔

اسی بارے میں