میکسیکو میں ایک اجتماعی قبر کی دریافت

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption طلبا کا یہ گروہ اساتذہ کے حقوق کے لیے ہونے والے مظاہرے میں شرکت کے لیے گیا تھا

میکسیکو میں حکام کا کہنا ہے کہ انھیں اگیوالا قصبے کے نواح میں ایک اجتماعی قبر ملی ہے۔ یہ وہی علاقہ ہے جہاں 26 ستمبر کو 43 طلبا لاپتہ ہو گئے تھے۔

ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ آیا ملنے والی لاشیں انھی طلبا کی ہیں یا نہیں جنھیں آحری مرتبہ پولیس کی وین میں زبردستی بھرتے ہوئے دیکھا گیا تھا۔

طلبا کا یہ گروہ اساتذہ کے حقوق کے لیے ہونے والے مظاہرے میں شرکت کے لیے گیا تھا۔

پولیس نے ان پر گولیاں چلا دیں جس میں کم سے کم چھ طلبا ہلاک ہو گئے تھے۔

اس فائرنگ سے تعلق کے الزام میں 22 پولیس اہلکاروں کو گرفتار کیا گیا تھا۔

عینی شاہدین کا کہنا ہے کہ بچ جانے والے تمام طلبا جو کہ زیرِ تربیت اساتذہ تھے کو لاپتہ ہونے سے قبل پولیس کی گاڑیوں میں زبردستی لے جایا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولیس اگیوالا میں ان لاپتہ 43 طلبا کی کوتلاش کر رہی ہے

ان میں سے بعض اس واقعے کے بعد چھپ گئے تھے اور بہت دنوں کے بعد انھوں نے گھر والوں سے رابطہ کیا۔ انھیں تب بھی جان کا خطرہ تھا۔

مقامی میڈیا کے مطابق ایک گمنام شخص کی جانب سے نشاندہی کیے جانے پر یہ اجتماعی قبر سنیچر کو دریافت کی گئی۔

حکام فورسنسک جانچ سے معلوم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں کہ یہ لاشیں کس کی ہیں۔

لاپتہ ہونے والے بعض طلبا کے ورثا بھی اس تلاش میں شامل ہو گئے ہیں اور گھر گھر جا کر لوگوں کو تصاویر دکھا کر اپنے پیاروں کے بارے میں پوچھ رہے ہیں۔

ریاست کے استغاثہ کے مطابق مقامی حکام اور پولیس افسران کے جرائم پیشہ افراد کے ساتھ تعلقات ہیں۔

اگیوالا قصبے کے میئر کے بھی وارنٹ گرفتاری جاری کیے جا چکے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption حکام کا کہنا ہے کہ مقامی پولیس اور حکام کے جرائم پیشہ گروہوں کے ساتھ تعلقات ہیں

اسی بارے میں