افریقہ میں امن مشن میں شامل پاکستانی فوجی ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اے ایف پی نے اقوامِ متحدہ کے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ بانگی میں گذشتہ دو روز سے جاری فسادات کے دوران سات افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوئے

جمہوریۂ وسطی افریقہ (سنٹرل افریکن ربپلک) میں میں فسادات کے دوران اقوامِ متحدہ کے امن مشن میں تعینات ایک پاکستانی فوجی ہلاک ہو گیا ہے۔

اطلاعات کے مطابق امن مشن کا ایک دستہ، جو پاکستانی اور بنگلہ دیشی فوجیوں پر مشتمل تھا، دارالحکومت بانگی میں جاری فسادات کی زد میں آ گیا جس کے نتیجے میں پاکستانی فوجی ہلاک ہو گیا۔

اسی دوران دستے کا ایک اور فوجی شدید زخمی ہوا جبکہ سات فوجیوں کو معمولی چوٹیں آئیں۔

جمہوریۂ وسطی افریقہ میں عیسائی مسلم فسادات کئی ماہ سے قابو میں تھے لیکن گذشتہ روز دارالحکومت کے حالات اُس وقت کشیدہ ہو گئے جب مقامی مسلمانوں پر ایک گرینیڈ حملے اور کئی مکانات کو نذرِ آتش کرنے کے دو واقعات کا الزام لگایا گیا۔

یہ اقوامِ متحدہ کے امن مشن میں گذشتہ ماہ سے تعینات غیر ملکی فوجیوں کا پہلا جانی نقصان ہے۔ مشن کے سربراہ باباکار گائی نے اِس عزم کا اظہار کیا ہے کہ جمہوریۂ وسطی افریقہ میں موجود فوجیوں پر حملہ کرنے والے مجرموں کو کیفرِ کردار تک پہنچایا جائے گا۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے اقوامِ متحدہ کے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ بانگی میں گذشتہ دو روز سے جاری فسادات کے دوران سات افراد ہلاک اور درجنوں زخمی ہوئے۔

جمہوریہ وسطی افریقہ میں اقوامِ متحدہ کے امن مشن کے سربراہ نے کہا کہ ان کی فوج ’حالات کو قابو میں رکھنے کے لیے بھرپور کارروائی کریں گی۔‘

جمہوریہ وسطی افریقہ میں امن مشن کے فوجی کی ہلاکت کا یہ واقعہ ایک ایسے وقت میں ہوا ہے جب مالی میں تعینات امن مشن کی سکیورٹی کے بارے میں خدشات کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ وہاں مختلف حملوں میں جولائی سے اب تک امن فورسز کے 31 فوجیوں کو ہلاک کیا جا چکا ہے۔

جمہوریہ وسطی افریقہ میں امن مشن کے فوجی کی ہلاکت کی خبر کمانڈروں کی طرف سے اقوامِ متحدہ کے سکیورٹی کونسل کو امن فوج کو درپیش خطرات پر بریفنگ کے بعد آئی۔

اسی بارے میں