برطانوی پارلیمان کی تحریک پر اسرائیل کی مذمت

تصویر کے کاپی رائٹ afp
Image caption اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان کی مون نے پیر کو غزہ کا دورہ کیا

اسرائیل نے برطانوی پارلیمان میں فلسطین کو علیحدہ ریاست کے طور پر تسلیم کرنے کی تحریک کی منظوری کی مذمت کی ہے اور کہا ہے کہ اس سے امن کے قیام کے امکانات کم ہوئے ہیں۔

دوسری طرف برطانیہ کے اسرائیل میں سفیر نے کہا ہے کہ یہ تحریک برطانوی عوام کی سوچ میں تبدیلی کی عکاس ہے۔

برطانوی پارلیمان میں تحریک اور سویڈن کا فلسطین کو علیحدہ ریاست کے طور پر تسلیم کرنے کا اعلان فلسطین کی طرف سے اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل میں مقبوضہ علاقوں سے اسرائیلی انخلاء کے بارے میں قرار داد منظور کرانے کی کوششوں کے پس منظر میں سامنے آئے ہیں۔

برطانوی پارلیمان میں منظور کی جانے والی تحریک کی صرف علامتی حیثیت ہے لیکن اسرائیل میں اس پر شدید رد عمل سامنے آیا ہے۔ اسرائیل کی حکومت کی طرف سے کوشش کی گئی تھی کہ اس تحریک کی منظوری کو نظر انداز کیا جائے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption کئی مبصرین کے مطابق غزہ پر اسرائیل کے حملے سے عالمی رائے عامہ تبدیل ہو گئی ہے

اسرائیل کی وزارتِ خارجہ نے اس تحریک پر تنقید کرتے ہوئے کہا تھا کہ فلسطینی ریاست اسرائیل سے مذاکرات کے بعد ہی وجود میں آ سکتی ہے۔

اسرائیل کی وزارتِ خارجہ نے مزید کہا کہ قبل از وقت فلسطین کو علیحدہ ریاست کے طور پر تسلیم کرنے سے فلسطینی حکام کو غلط پیغام ملیں گے کہ وہ مشکل فیصلے کرنے سے بچ سکتے ہیں۔

برطانیہ میں اسرائیل کے سفیر میتھیو گولڈ نے اسرائیلی ریڈیو سے انٹرویو میں کہا کہ اسرائیلی حکام کو اس تحریک کو نظر انداز نہیں کرنا چاہیے۔

انھوں نے کہا کہ اس پر تشویش ہونی چاہیے کیوں کہ اس سے عوامی رائے کی سمت کا اظہار ہوتا ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ انھیں تشویش ہے کہ رائے عامہ تبدیل ہو رہی ہے اور اس سال موسم گرما میں غزہ میں لڑائی اور یہودی آبادیوں کی تعمیر سے عوامی کی رائے بدل رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption غزہ پر اسرائیل بمباری سے پورے کے پورے محلے کھنڈر بن گئے ہیں

انھوں نے کہا کہ برطانوی پارلیمان میں تحریک کی منظوری سے پتا چلتا ہے کہ ہوا کس سمت میں چل رہی ہے۔

اسرائیل میں قائد حزب اختلاف ائزک ہرزوگ نے برطانوی تحریک کو اسرائیل وزیر اعظم نیتن یاہو کی شکست قرار دیا اور کہا کہ حالیہ دنوں میں اسرائیل کے سویڈن، اقوام متحدہ اور امریکہ کے ساتھ سفارتی تعلقات کشیدگی کا شکار ہیں۔

انھوں نے کہا کہ :’دنیا کے ہر کونے سے اسرائیل کی طرف سرد ہوائیں آ رہی ہیں لیکن حکومت ان حالات سے انکار کر رہی ہے اور ایک سفارتی طوفان کو آواز دے رہی ہے۔‘

انھوں نے کہا نیتن یاہو صدر اوباما سمیت اور دیگر دوستوں سمیت سب سے لڑنا چاہ رہے ہیں۔

موساد کے سابق ڈائریکٹر اور یورپی یونین میں اسرائیل کے سابق سفیر افراہیم ہالوی نے غزہ پر اسرائیلی جارحیت کو اس صورت حال کا ذمہ دار ٹھہرایا۔

انھوں نے کہا کہ انھیں سمجھنا چاہیے کہ رائے عامہ اسرائیل کے خلاف ہو رہی ہے اور غزہ پر اسرائیلی حملے سے جسے ’آپریشن پروٹیکٹو ایج‘ کا نام دیا گیا تھا اس کے اس میں تیزی آئی ہے۔

اقوام متحدہ میں اسرائیل کے سابق سفری میچل اورن نے اسرائیلی حکومت کو خبردار کیا کہ اسے برطانوی تحریک کو نظر انداز نہیں کرنا چاہیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بین الاقوامی برادری نے غزہ کی تعمیر نو کے لیے پانچ ارب ڈالر دینے کا وعدہ کیا ہے

ایک ویب سائٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے انھوں نے کہا کہ سویڈن کے اعلان سے برطانوی تحریک زیادہ اہمیت رکھتی ہے۔

انھوں نے مزید کہا کہ ’برطانیہ سلامتی کونسل کا رکن ہے اور فلسطین حکام نومبر میں اقوام متحدہ سے رجوع کرنے والے تاکہ اسرائیل کے مقبوضہ علاقوں سے انخلا کی کوئی حتمی تاریخ مقرر کی جا سکے۔ امکان یہ ہے امریکہ اس پر رائے شماری میں حصہ نہ لے۔‘

انھوں نے کہا کہ اسرائیل سمجھ نہیں رہا کہ برطانیہ اسرائیل کا قریب اتحادی اور دوست رہا ہے اور وہاں 274 ارکان پارلیمان اس قرار داد کی حمایت کی ہے۔

فلسطین میں اس تحریک پر خوشی کا اظہار کیا گیا۔ حنان اشروی نے کہا کہ فلسطین کو ریاست پر تسلیم کرنا ایک اصولی فیصلہ ہے اور انصاف اور امن کی طرف ایک اہم قدم ہے۔

انھوں نے کہا فلسطینوں کا اپنے مستقل کے بارے میں فیصلہ کرنا کا حق کس مذاکرات کا محتاج نہیں ہے۔

انھوں نے کہا کہ فلسطین کو علیحدہ ریاست کے طور پر تسلیم کرنے اور اسرائیل کے ساتھ مذاکرات کا آپس میں کوئی تعلق نہیں ہے اور اس پر کس طور بھی فلسطینی کوئی سودے بازی نہیں کر سکتے۔ انھوں نے کہا اسرائیل کا یہ دعوی انتہائی غیر منصفانہ اور غیر اخلاقی ہے۔

اسی بارے میں