نیٹو روسی ہیکرز کے نشانے پر

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption کچھ اور تحقیقاتی فرمز کے خیال میں ’سینڈورم بگ‘ کے حملے ماضی میں ’کوداغ بگ‘ کے نام سے رپورٹ کیے گئے

روسی ہیکرز کی جانب سے مائیکرو سافٹ ونڈو کے ایک بگ کے ذریعے نیٹو اور مغربی ممالک کے حکومتوں کی جاسوسی کرنے کا انکشاف ہوا ہے۔

سائبر انٹیلی جنس فرم ’آئی سائٹ پارٹنرز‘ کی ایک رپورٹ کے مطابق، اس بگ کو پولینڈ اور یوکرین کے کمپیوٹرز تک رسائی کے لیے بھی استعمال کیا گیا۔

لیکن مائیکروسافٹ کا کہنا ہے کہ وہ جلد اس بگ سے چھٹکارا حاصل کر لیں گے۔

کمپنی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ بگ سے متاثر ہونے والے کمپیوٹرز کے لیے نئی آٹومیٹک اپڈیٹ جاری کی جائے گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مائیکرو سافٹ فی الحال یہ بتانے سے قاصر ہے کہ ان ہیکرز کے روس کی حکومت سے کوئی روابط ہیں

کیا اس میں روس کی حکومت ملوث ہے؟

ابھی تک یہ بگ، دفاع، توانائی، ٹیلی کمیونیکیشن، ’گلب سیک‘ کانفرنس کے مندوبین اور روس یوکرین تعلقات کے ایک ماہر کے کمپیوٹرز کو ہیک کر چکا ہے۔

یہ ہیکنگ کمپنی گزشتہ پانچ سالوں سے جاری ہے۔ مائیکرو سافٹ فی الحال یہ بتانے سے تو قاصر ہے کہ ان ہیکرز کے روس کی حکومت سے کوئی روابط ہیں۔

لیکن ایک سینئیر تجزیہ کار کے خیال میں ہیکرز کو حکومتی سر پرستی حاصل تھی کیونکہ یہ لوگ پیسے نہیں بلکہ اہم معلومات اکٹھی کرنے کے چکر میں تھے۔

سولہ صفحات پر مشتمل ایک رپورٹ میں ’آئی سائٹ‘ کا کہنا ہے کہ نیٹو کے کمپیوٹروں کو دسمبر دو ہزار تیرہ میں ٹارگٹ کیا گیا تھا۔

کچھ اور تحقیقاتی اداروں کے خیال میں ’سینڈورم بگ‘ کے حملے ماضی میں ’کوداغ بگ‘ کے نام سے رپورٹ کیےگئے۔

۔

اسی بارے میں