لندن میں ممبئی طرز پر حملوں کی منصوبہ بندی کا الزام

مبینہ دہشت گرد تصویر کے کاپی رائٹ PA
Image caption چھبیس سالہ انسیڈال کے متعلق کہا جا جا رہا ہے کہ وہ مختلف قسم کے حملوں کا ارادہ رکھتے تھے

برطانیہ کی ایک اعلیٰ عدالت کو بتایا گیا ہے کہ ایک مشتبہ دہشت گرد سنہ 2008 میں ہونے والے ممبئی حملوں کی طرز پر بلا امتیاز لوگوں کو ہلاک کرنے کا منصوبہ بنا رہا تھا۔

کوئن کونسل (کیو سی) رچرڈ وہٹم نے اولڈ بیلی کی عدالت کو بتایا کہ ملزام ایرول انسیڈال کی کار میں ٹونی بلیئر اور چیری بلیئر کا پتہ بھی موجود تھا۔

انھوں نے کہا کہ 26 سالہ انسیڈال مختلف حملوں کا ارادہ رکھتا تھا جن میں بلا امتیاز ہلاکتیں بھی شامل تھیں۔

ملزم انسیڈال پر، جو دہشت گرد حملوں کی منصوبہ بندی سے انکار کرتے ہیں، کچھ مقدمہ خفیہ طور پر بھی چلایا جا رہا ہے۔

جیوری کو بتایا گیا کہ انسیڈال نے حملوں کا ابھی کوئی مکمل منصوبہ نھیں بنایا تھا لیکن ان کے قبضے سے ٹونی بلیئر کا پتہ ملنا کافی اہم بات ہے۔

کیو سی وہٹم نے کہا کہ ’پہلے چارج کے مطابق ایرول انسیڈال نے کوئی مخصوص ہدف یا کوئی خاص طریقہ نھیں چنا تھا لیکن پورے مقدمے کو سامنے رکھتے ہوئے اور جو شواہد میں پیش کرنے جا رہا ہوں، ہو سکتا ہے کہ آپ کو لگے کہ یہ پتہ اہمیت رکھتا ہے۔‘

ملزم انسیڈال پر ایک سکیور ڈیجیٹل میموری کارڈ رکھنے کا الزام بھی ہے جو کہ ’اس شخص کے لیے کارآمد ہو سکتا ہے جو دہشت گردی کا عمل کرنے جا رہا ہو یا اس کی منصوبہ بندی کر رہا ہو۔‘

سوموار کو جیوری کو بتایا گیا کہ اس مقدمے کے کچھ حصے کبھی بھی منظرِ عام پر نھیں آئیں گے۔

اسی بارے میں