’مر جاؤں تو بچوں کوبھی خبر نہ ہو‘

جیریمی
Image caption جیریمی وڈورڈ امریکی فوج کے ساتھ عراق اور افغانستان میں لڑ چکے ہیں

شمال مشرقی شام میں شامی کرد وائی پی جی کے جنگجوؤں کے ایک گروہ سے ملاقات کے دوران فوجی وردی میں ملبوس ایک ہلکی سی داڑھی والا لڑکا سیپان بھی بالکل ان جیسا ہی لگتا ہے۔

لیکن دراصل وہ ان جیسا نہیں ہے۔ جب وہ بولتا ہے تو اس کے انگریزی لہجے میں امریکہ کے جنوب کی آمیزش صاف نظر آتی ہے۔ سیپان کا اصل نام جیرمی ہے اور اس کا تعلق امریکی ریاست مسی سپی سے ہے۔

اسے یہاں آئے ہوئے ابھی ایک ماہ ہی ہوا ہے لیکن وہ اس جگہ کو گھر سے دور گھر کہتا ہے۔

جیرمی وڈورڈ ان چند امریکی سابق فوجیوں میں سے ہے جو آدھی دنیا کا سفر طے کر کے دولتِ اسلامیہ کے خلاف جنگ لڑنے یہاں آئے ہیں۔

اس کا اپنا سارا سامان اس وقت اس سے چھن گیا جب دولتِ اسلامیہ نے جیزا پر قبضہ کیا جہاں وہ رہ رہا تھا۔ تین دن کے بعد دولتِ اسلامیہ کو وہاں سے پسپا ہونا پڑا۔ سیپان کہتا ہے کہ اس نے دو جنگجوؤں کو ہلاک کیا تھا۔

’میں اس سے کوئی برا شخص نہیں بن جاتا۔‘

’وہ معصوم لوگوں کو مارتے ہیں، عورتوں اور بچوں کو ریپ کرتے ہیں اور انھیں غلاموں کے طور پر بیچتے ہیں۔ میرے مطابق دولتِ اسلامیہ کے رکن کو ہلاک کرنا دنیا کے لیے ایک اچھا کام ہے۔ ان سب کا صفایا ہونا چاہیے۔‘

Image caption برائن ولسن کہتے ہیں کہ دولتِ اسلامیہ والے برے لوگ ہیں اور کرد اچھے

دوسرے امریکی رضاکاروں کی طرح جو کہ کسی ایک یونٹ میں نہیں بلکہ ایک بڑے علاقے میں کئی محاذوں پر پھیلے ہوئے ہیں، سیپان نے شام کی جنگ انٹرنیٹ اور فیس بک کے ذریعے دیکھی اور پھر سوشل میڈیا کے ذریعے ہی رابطہ کیا۔

سیپان نے ایک اور امریکی زاگروس عرف برائن ولسن کا پیچھا کیا جن کے کردوں سے تعلقات تھے اور جو انھیں ایک مہینہ پہلے ترکی کے راستے عراقی کردستان لائے۔

برائن شمال مشرقی شام کے مغربی علاقے میں ایک اور محاذ راس العین پر لڑ رہے ہیں جو کرد جنگجوؤں اور اس کے سیاسی دھڑے پی وائی ڈی کے کنٹرول میں ہے۔ یہ بذات خود عبداللہ اوجلان کی ترک ’پی کے کے‘ جماعت کی ہی ایک شاخ ہے۔

برائن نے مجھے بتایا کہ ’یہاں کچھ لڑکے تھوڑی بہت انگریزی بول لیتے ہیں اور وہ مجھے کردی سکھا رہے ہیں۔‘

’میں چاہتا تھا کہ یہاں آ کر کردوں کی دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑائی میں مدد کروں۔ میرے لیے یہ بہت سادہ سی بات ہے۔ دولتِ اسلامیہ والے برے لوگ ہیں اور یہ اچھے لوگ۔ کرد کسی کے علاقے پر قبضہ کرنے نہیں آئے بلکہ وہ اپنے گھروں کا دفاع کر رہے ہیں۔‘

سیپان کی طرح برائن بھی کہتا ہے کہ شاید اسے یہاں لمبا عرصہ رہنا پڑے۔ اگرچہ ریاست اوہائیو میں اس کی سابقہ بیوی سے اس کے دو بچے بھی ہیں۔

جب ہم اس سے ملے تو وہ ایک ساتھی کے جنازے سے ہو کر آ رہا تھا۔

اس نے کہا کہ اگر میرے ساتھ ایسا ہو جائے تو شاید میرے بچوں کو اس کی سمجھ بھی نہ آئے۔ حقیقت میں امریکہ میں بہت سے لوگ شاید اس کو نہیں سمجھ سکیں گے۔‘

جیرمی وڈورڈ بھی موت کو بہت قریب سے دیکھ چکا ہے۔ ایک گرینیڈ حملے میں اس کا دانت ٹوٹ گیا تھا اور وہ اچھی طرح جانتا ہے کہ اس کے ہلاک ہونے کے امکانات بھی کافی ہیں۔

جب میں نے اس سے پوچھا کہ یہاں سے جانے کا ’کٹ آف پوائنٹ‘ کیا ہے تو اس نے ہنس کر کہا: ’میری موت۔‘

اسی بارے میں