تشدد سے ہر پانچ منٹ میں ایک بچہ ہلاک ہوتا ہے: یونیسف

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption لاطینی امریکہ میں بلوغت تک پہچنے والے لڑکوں کے تشدد سے ہلاک ہونے کے امکانات برطانیہ کے مقابلے میں 70 گنا زیادہ ہیں

اقوامِ متحدہ کے ذیلی ادارے یونیسف نے ایک رپورٹ میں کہا ہے کہ دنیا میں ہر پانچ منٹ میں تشدد کی وجہ سے ایک بچہ ہلاک ہوتا ہے۔ یونیسف نے بچوں کے خلاف ہر قسم کا استحصال ختم کرنے کے لیے سنہ 2030 تک نئے اہداف متعین کرنے پر زور دیا ہے۔

یونیسف کی برطانیہ شاخ کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بچوں کی زیادہ اموات جنگ زدہ علاقوں سے باہر ہوتی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق 20 برس سے کم عمر لاکھوں نوجوان خود کو اپنے گھروں، سکولوں اور محلوں میں غیر محفوظ محسوس کرتے ہیں۔ رپورٹ میں بڑھتی ہوئی شہری آبادی، نوجوانوں کی بے روزگاری اور عدم مساوات کو خطرات پیدا کرنے کے لیے موردِ الزام ٹھہرایا گیا ہے۔

یونیسف برطانیہ نے ’خطرات میں گھرے بچے: بچوں کے خلاف تشدد ختم کرنے کے لیے اقدامات‘ نامی رپورٹ خطرے سے دوچار بچوں کے لیے مہم کے آغاز کے موقعے پر شائع کی ہے۔

رپورٹ میں خبردار کیا گیا ہے کہ اگر دنیا بھر میں حکومتوں نے اقدامات نہیں کیے تو آئندہ سال 20 برس سے کم عمر کے 345 بچے روزانہ کے حساب سے ہلاک ہو سکتے ہیں۔

رپورٹ کی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ تشدد کے شکار بچوں کے دماغ میں اس فوجی کے دماغ جیسی نقل و حرکت ہوتی ہے جس نے میدانِ جنگ میں وقت گزارا ہو۔ اس بات کا قوی امکان ہوتا ہے کہ ان میں 30 فیصد سے زائد بچے لمبے عرصے تک نفسیاتی دباؤ کا شکار ہوں۔

یونیسف کا کہنا ہے کہ غربت میں رہنے والے بچے تشدد کا زیادہ شکار ہوتے ہیں۔ لاطینی امریکہ میں بلوغت تک پہچنے والے لڑکوں کے تشدد سے ہلاک ہونے کے امکانات برطانیہ کے مقابلے میں 70 گنا زیادہ ہیں۔

یونیسف یو کے کے ایگزیکٹیو ڈائریکٹر ڈیوڈ بل نے کہا کہ ’ہم چاہتے ہیں کہ خوف میں رہنے والے بچے خود کو محفوظ محسوس کر سکیں۔‘

انھوں نے کہا: ’عالمی سطح پر اہداف متعین کرنے سے ہی دنیا کو بچوں کے لیے محفوظ بنایا جا سکتا ہے۔‘

یونیسف یو کے کا کہنا ہے کہ صرف 41 ممالک نے بچوں پر تشدد کے سلسلے میں واضح پابندی عائد کی ہے۔ لیکن رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ امیر ممالک اس حوالے سے لاپروائی کے مرتکب نہیں ہو سکتے کیونکہ کوئی بھی ملک ایسا نہیں جہاں بچوں کو مکمل طور پر تحفظ حاصل ہو۔

اسی بارے میں