’دولتِ اسلامیہ مسلمانوں کے لیے اسرائیل سے بڑا خطرہ‘

Image caption محمد فنیّش کے خیال میں دولتِ اسلامیہ جیسے گروپوں کی وجہ سے مسلمانوں کی شبیہ پر برا اثر پڑتا ہے

لبنانی عسکریت پسند تنظیم حزب اللہ نے کہا ہے کہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ خطے کے مسلمانوں کے لیے اسرائیل سے بڑا خطرہ ہے۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے تنظیم کے رہنما اور لبنانی وزیر محمد فنیّش نے کہا ہے کہ دولتِ اسلامیہ کے خلاف جنگ میں ان کے مقاصد مغربی طاقتوں سے مشترک ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اسرائیل کے مقابلے میں دولتِ اسلامیہ نے کہیں زیادہ مسلمانوں کو ہلاک کیا ہے لیکن یہ معاملہ صرف مسلمانوں کے ہاتھوں دوسرے مسلمانوں کی ہلاکت کا نہیں ہے۔

بی بی سی کی مشعل حسین سے بات کرتے ہوئے محمد فنیّش نے کہا کہ ’مسلمانوں کے لیے اصل خطرہ اس (دولتِ اسلامیہ) قسم کی تنظیمیں ہیں۔ ان کی وجہ سے مسلمانوں کی شبیہ پر برا اثر پڑتا ہے کیونکہ ان گروپوں نے اسرائیل سے کہیں زیادہ مسلمانوں کو ہلاک کیا ہے۔‘

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

دولت اسلامیہ کیا ہے، بی بی سی اردو کی ویڈیو رپورٹ

انھوں نے کہا کہ ’یہ سنّی مسلمانوں کو بھی مار رہے ہیں۔ ہم نے یہ موصل اور حمص کے علاوہ شام میں حزبِ مخالف کی باہمی لڑائیوں میں دیکھا ہے۔‘

حزب اللہ کے رہنما نے کہا کہ ’ان جنگجوؤں سے عوام کو پہنچنے والا نقصان شام میں بشار الاسد کی حکومت اور مخالفین کے مابین لڑائی سے ہونے والے نقصان سے کہیں زیادہ ہے۔‘

ساتھ ہی ساتھ محمد فنیّش نے یہ بھی الزام لگایا کچھ عرب اور مغربی ممالک شام میں جاری تنازع کو ہوا دینے کے ذمہ دار ہیں۔

حزب اللہ کے جنگجو شام میں صدر بشار الاسد کی مخالف افواج کے خلاف لڑائی میں شامل ہیں۔

محمد فنیّش کا کہنا تھا کہ شام میں جاری لڑائی کا خاتمہ طاقت کے استعمال کے ذریعے نہیں بلکہ بات چیت کے ذریعے ہونا چاہیے۔

خیال رہے کہ حزب اللہ کو ایران کی حمایت یافتہ تنظیم قرار دیا جاتا ہے اور اطلاعات کے مطابق امریکی صدر براک اوباما نے ایرانی رہبرِ اعلیٰ آیت اللہ علی خامنہ ای کو ایک خفیہ خط لکھا ہے جس میں دولتِ اسلامیہ کے خلاف مشترکہ مفاد میں جنگ کی بات کی گئی تھی۔

یہ خط گذشتہ مہینے بھیجا گیا تھا اور صدارت سنبھالنے کے بعد براک اوباما کا ایرانی رہنما کے نام یہ چوتھا خط ہے۔

امریکی اخبار وال سٹریٹ جرنل کے مطابق اس خط سے اندازہ ہوتا ہے کہ صدر براک اوباما کے خیال میں ایران کو دولتِ اسلامیہ کے خلاف جنگ میں شامل کرنا بہت اہم ہے۔

اسی بارے میں