’رقہ میں شامی طیاروں کی بمباری سے 60 ہلاک‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption رقہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کا مضبوط گڑھ سمجھا جاتا ہے

شام کے شمال مشرقی شہر رقہ کے رہائشیوں کا کہنا ہے کہ شہر پر حکومتی افواج کی بمباری سے کم از کم 60 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

ادھر اقوامِ متحدہ کا کہنا ہے کہ شام میں جاری تشدد اور سرد موسم کی وجہ سے مشکلات کے شکار اور امداد کے منتظر افراد کی تعداد اندازاً ایک کروڑ 20 لاکھ سے تجاوز کرگئی ہے۔

عینی شاہدین کے مطابق شامی طیاروں نے شہر میں نو مقامات کو نشانہ بنایا اور مرنے والوں میں بچوں سمیت عام شہری بھی شامل ہیں۔

رقہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ کا مضبوط گڑھ سمجھا جاتا ہے۔

ایک مقامی شخص نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ رقہ میں صرف ایک ہسپتال کام کر رہا ہے اور وہ زخمیوں کو مناسب طبی امداد دینے میں مشکلات درپیش ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ شہر میں کھانے پینے کی اشیا کی قلت ہے اور دولتِ اسلامیہ کے ٹھکانوں پر دن میں شامی اور رات کو امریکہ اور اس کے اتحادی ممالک کے طیاروں کے حملوں کے نتیجے میں مقامی آبادی خوف کا شکار ہے۔

شام میں متاثرین میں اضافہ

ادارے کے حقوقِ انسانی کے مشن کی سربراہ ویلیری آموس نے سلامتی کونسل سے اپنے خطاب میں کہا ہے کہ ترکی اور اردن سے شام میں جانے والے امدادی قافلے اگرچہ امید کے برعکس متاثرین کی بڑی تعداد تک امداد نہیں پہنچا پائے لیکن اس کے باوجود ان کوششوں سے فرق پڑا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption چار ماہ میں شامی متاثرین کی تعداد میں 22 لاکھ افراد کا اضافہ ہوا ہے

انھوں نے سلامتی کونسل پر زور دیا کہ وہ سرحد پار سے شام میں امداد کی فراہمی کے منصوبے کی مدت میں اضافہ کرے۔ یہ اجازت آئندہ برس کے آغاز میں ختم ہو رہی ہے۔

ویلیری آموس کا کہنا تھا کہ رواں برس جولائی میں شام میں امداد کے منتظر متاثرین کی تعداد ایک کروڑ آٹھ لاکھ تھی اور چار ماہ میں اس تعداد میں 22 لاکھ افراد کا اضافہ ہوا ہے۔

انھوں نے بتایا کہ اس وقت شام میں 76 لاکھ افراد ملک کے اندر ہی اپنا گھر بار چھوڑ کر محفوظ مقامات کی جانب نقل مکانی کر گئے ہیں جبکہ 32 لاکھ افراد نے ملک ہی چھوڑ دیا ہے۔

حقوقِ انسانی کے مشن کی سربراہ نے سلامتی کونسل کو بتایا کہ چودہ جولائی کو اقوامِ متحدہ کی قرارداد کے نتیجے میں شام میں متاثرین کو سرحد پار سے امداد کی فراہمی کا عمل شروع ہوا اور اس مشن کے دوران حلب، ادلب، درعا اور قنیطرہ میں ایسے علاقوں میں امداد پہنچی جہاں تک رسائی بہت مشکل تھی۔

تاہم انھوں نے یہ بھی کہا کہ اقوامِ متحدہ اب بھی شام میں متاثرین کی ضروریات پوری کرنے میں مکمل طور پر کامیاب نہیں ہو رہی خصوصاً حکومت کے زیرِ اثر علاقوں میں پھنسے ایک لاکھ 85 ہزار پانچ سو اور باغیوں کے زیرِ قبضہ علاقوں میں محصور ساڑھے 26 ہزار افراد تک امداد نہیں پہنچائی جا سکی ہے۔

اسی بارے میں