بھارتی نژاد امریکی بھارت کے لیے نیا امریکی سفیر

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption رچرڈ راہل ورما ہند نژاد امریکی شہری ہیں اور ہندوستان کے سفیر بننے والے پہلے ہندوستانی امریکی ہیں

امریکہ میں جنوبی اور وسطی ایشیائی معاملات کی معاون وزیر خارجہ نشا بسوال نے بتایا ہے کہ امریکی سینیٹ نے منگل کو بھارتی نژاد امریکی کا بھارت کے لیے نئے سفیر کے طور انتخاب کر لیا ہے۔

انھوں نے اپنے ایک ٹوئیٹ میں کہا کہ سینیٹ نے بھارت میں نئے امریکی سفیر کے طور پر رچرڈ راہل ورما کے نام کی تصدیق کر دی ہے۔

رچرڈ راہل ورما بھارتی نژاد امریکی شہری ہیں اور ہندوستان کے سفیر بننے والے پہلے ہندوستانی امریکی ہیں۔ ان کے والدین سنہ 1960 کی دہائی میں ہندوستان سے امریکہ منتقل ہو گئے تھے۔

مبصرین بھارتی نژاد امریکی شہری کے بھارت میں سفیر بنائے جانے کو بھارت اور امریکہ کے درمیان مضبوط رشتے کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔

جبکہ واشنگٹن سے ہمارے نمائندے برجیش اپادھیائے کا کہنا ہے کہ امریکہ اور بھارت کے درمیان اس وقت کئی پیچیدہ مسئلے بھی ہیں جن کا سامنا رچرڈ ورما کو جلد ہی کرنا ہوگا۔

ان میں سے ایک ہے بھارت امریکہ ایٹمی معاہدہ جو ہندوستان کے گھریلو قانون کی وجہ سے التوا کا شکار ہے۔ دوسرے امریکی دوا صنعت کی جانب سے بھی ہندوستان پر دباؤ ڈالا جا رہا ہے کہ وہ اپنے پیٹنٹ قانون اور انٹیلکچوئل پراپرٹی رائٹس قانون میں ترامیم کرے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption دیویانی کھوبراگڑے کی نیویارک میں حراست پر دہلی میں ہندو تنظیموں نے مظاہرے کیے تھے

راہل رچرڈ ورما سے پہلے نینسی پاؤل بھارت میں امریکہ کی سفیر تھیں۔

اس وقت خبریں آئی تھیں کہ نینسی پاؤل کو ہندوستانی سفارتی اہلکار دیوياني كھوبراگڑے کی امریکہ میں گرفتاری سے پیدا شدہ کشیدگی اور انتخابات سے قبل مودی کے بارے میں درست اندازہ اختیار نہ کرنے کا خمیازہ بھگتنا پڑا ہے۔ دوسری جانب امریکی وزارتِ خارجہ نے ان خبروں کو بے بنیاد بتایا تھا۔

امریکہ کے صدر براک اوباما اگلے ماہ جنوری میں بھارت کا دورہ کرنے والے ہیں جہاں وہ 26 جنوری کو بھارت کی یوم جمہوریہ کی تقریب میں مہمان خصوصی ہوں گے۔

رچرڈ راہل ورما امریکی صدر کے دورے سے قبل بھارت آئیں گے۔ انھوں نے امریکہ اور بھارت کے درمیان سول جوہری معاہدے کی پیش رفت میں اہم کردار ادا کیا تھا اور وہ ہند امریکہ مضبوط رشتے کے حامی رہے ہیں۔

حال ہی میں انھوں نے ایک ٹاپ امریکی تھنک ٹینک سنٹر فار امریکن پروگریس میں ’انڈیا 2020 پروجکٹ شروع کیا تھا۔‘

اس سے قبل اوباما حکومت میں انھوں نے وزارت خارجہ میں قانونی امور کے نائب وزیر کے طور پر سنہ 2009 سے 2011 کے درمیان کام کیا تھا۔

اسی بارے میں