امریکہ: پولیس تشدد کے خلاف بڑے پیمانے پر مظاہرے

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سڑکوں پر اترنے والے لوگوں میں ایرک گارنر کے اہل خانہ کے علاوہ مائیکل براؤن کے رشتہ دار بھی شامل ہیں

امریکہ میں پولیس کے تشدد سے نہتے سیاہ فام افراد کی ہلاکتوں کے حالیہ واقعات کے خلاف دارالحکومت واشنگٹن سمیت کئی شہروں میں مظاہرے ہوئے ہیں۔

واشنگٹن کے علاوہ نیویارک اور بوسٹن میں نکالی جانے والی بڑی احتجاجی ریلیوں میں شدید سردی کے باوجود ہزاروں افراد نے شرکت کی ہے جن میں سفید اور سیاہ فام دونوں شامل تھے۔

انہ مظاہرین نے بینر اور بڑے بڑے پلے کارڈ اٹھا رکھے تھے جن پر ’سیاہ فام لوگوں کی زندگی پر بھی فرق پڑتا ہے۔‘، ’نسل پرست پولیس کو روکو‘ اور ’میں سانس نہیں لے سکتا‘ جیسے نعرے درج تھے۔

امریکہ میں حالیہ دنوں میں نہتے سیاہ فام لوگوں پر پولیس کی کارروائی اور اس میں سیاہ فام لوگوں کے مارے جانے کے معاملے سامنے آئے ہیں۔

’میں سانس نہیں لے سکتا‘ جیسے نعرے کا براہ راست تعلق ایرک گارنر سے ہے جو نیویارک میں اپنی گرفتاری کے وقت گڑگڑا رہے تھے کہ میں سانس نہیں لے سکتا ہوں اور اسی دوران گارنر کی موت ہوگئی تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مظاہروں میں شریک لوگ ہر نسل اور مذہب سے تعلق رکھتے ہیں

واشنگٹن میں ہونے والے مظاہرے میں ایرک گارنر کے اہل خانہ کے علاوہ مائیکل براؤن نامی سیاہ فام شہری کے رشتہ دار بھی شامل تھے۔

18 سالہ مائیکل براؤن کو ریاست میزوری کے علاقے فرگوسن میں کچھ عرصہ قبل ایک سفید فام پولیس افسر نےگولی مار دی تھی۔

دارالحکومت واشنگٹن میں مظاہرے کے دوران گارنر کی والدہ گوین کار نے اس مارچ کو ’تاریخ ساز لمحہ‘ قرار دیا۔

ان کا کہنا تھا ’ان تمام لوگوں کو جو ہمارا ساتھ دینے کے لیے نکلے دیکھ کر خوشی ہو رہی ہے۔ اس ہجوم کو دیکھیے، سیاہ فام، سفید فام تمام نسلوں اور مذاہب کے لوگ ہیں۔ ہمیں ہر موقعے پر اسی طرح ایک ساتھ کھڑے ہونے کی ضرورت ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

بی بی سی کی نامہ نگار سے بات کرنے والے زیادہ تر افراد کا کہنا تھا کہ گارنر کی موت انھیں یہاں لانے کا باعث بنی ہے۔

مائیکل براؤن کے معاملے میں پولیس کے خلاف کارروائی نہ کرنے کے فیصلے سے نہ صرف فرگوسن میں بلکہ دور دراز آک لینڈ اور کیلیفورنیا میں بھی پر تشدد مظاہرے بھڑک اٹھے تھے تاہم گارنر کی موت پر ہونے والے مظاہرے پر امن رہے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption زیادہ تر افراد کا کہنا تھا کہ گارنر کی موت انھیں یہاں لانے کا باعث بنی ہے۔
تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption مظاہرین قوانین میں تبدیلی کا مطالبہ کر رہے ہیں

اسی بارے میں