’ضلویا دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے آزاد‘

Image caption لڑائی میں 300 جنگجوں کے ہلاک ہونے اطلات ہیں۔

عراق کے سیکورٹی ذرائع کا کہنا ہے کہ عراقی فوج اور اتحادی شیعہ ملیشیا نے بغداد کے شمال میں واقع ضلویا قصبے کو دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے چھڑا لیا ہے۔

عراقی سیکورٹی ذرائع نے لڑائی میں 300 جنگجوں کے ہلاک ہونے کا دعویٰ بھی کیا ہے۔ مگر ان اطلاعات کی کوئی غیرجانبدارانہ تصدیق نہیں ہوسکی۔

یاد رہے کہ جون میں ایک مقامی سنی قبیلے کی جانب سے دولت اسلامیہ کی حمایت سے انکار کے بعد جنگجوں نے اس قصبے کے شمالی حصے پر قبضہ کر لیا تھا۔

تب سے عراقی فوج امریکی فضائیہ کے تعاون سے ضلویا کو دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے چھڑانے کی کوشش کر رہی ہے۔

مقامی افراد اور پولیس کے مطابق عراقی افواج اور شیعہ ملیشیا نے اتوار کے روز قصبے میں موجود دولتِ اسلامیہ کے جنگجوں کے خلاف ایک بڑی کارروائی کا آغاز کیا، جو رات بھر جاری رہی۔

کارروائی کے نتیجے میں قصبے کے بیشتر علاقوں کو آزاد کرا لیا گیا اور دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں کو قصبے کے شمال مغربی علاقے تک محدود کر کے محاصرے میں لے لیا گیا۔

تازہ ترین اطلاعات کے مطابق لڑائی میں دولتِ اسلامیہ کو بھاری جانی نقضان اٹھنا پڑا۔

ایرانی حمایت یافتہ بدر بریگیڈ نامی شیعہ ملیشیا کے ایک کمانڈر نے ایران کے پریس ٹی وی کو بتایا کہ ضلویا اب مکمل حکومتی قبضے میں ہے۔

اسی بارے میں