کيو زیڈ8501: ’سمندر میں چار بڑی اشیا ملی ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ایئر ایشیا ملائیشیا کی نجی فضائی کمپنی ہے اور اب اس کی سورابایا سے سنگاپور کی تمام پروازیں معطل کر دی گئی ہیں

انڈونیشیا کے حکام کا کہنا ہے کہ ایئر ایشیا کے جہاز کے ملبے کو سمندر میں تلاش کرنے والی ٹیم کو چار ’بڑی اشیا‘ ملی ہیں۔

سرچ اینڈ ریسکیو ایجنسی کے سربراہ بمبانگ سولیستیو کا کہنا ہے کہ اس بات کی تصدیق کرنے کے لیے کہ آیا یہ ’اشیا‘ جہاز کا ملبہ ہیں یا نہیں، ان اشیا کی تصویر لینے کے لیے پانی کے اندر چلنے والی گاڑی کو نیچے بھیجا جا رہا ہے۔

دریں اثنا انڈونیشیا کے موسمیاتی ادارے کے مطابق حادثے کے پیچھے سب سے بڑا عنصر خراب موسم تھا۔

بی بی سی کو معلوم ہوا ہے کہ انڈونیشیا سے سنگاپور جاتے ہوئے بحیرۂ جاوا میں گر کر تباہ ہونے والے ایئر ایشیا کے مسافر بردار طیارے کے پاس حادثے والے دن پرواز کا لائسنس ہی نہیں تھا۔

كيو زیڈ8501 نامی اس ایئربس اے 320 طیارے کو صرف ہفتے کے دیگر چار دنوں میں اس ہوائی راستے پر پرواز کرنے کی اجازت تھی۔

انڈونیشیا کی وزارتِ ٹرانسپورٹ نے اب سورابايا سے سنگاپور جانے والی ایئر ایشیا کی تمام پروازیں معطل کر دی ہیں۔

اتوار کو حادثے کا شکار ہونے والے طیارے پر 162 افراد سوار تھے جن میں سے بیشتر کی لاشیں تاحال سمندر میں ہی موجود ہیں۔

حادثے کے پانچویں دن جمعے کو سمندر سے مزید لاشیں نکالی گئی ہیں جن کے بعد انڈونیشیائی حکام کے مطابق اب تک ملنے والی لاشوں کی تعداد 30 ہوگئی ہے۔

حادثے کا شکار ہونے والے جہاز کے ملبے کی تلاش اب خاص آلات آنے کے بعد پانی کے اندر شروع کر دی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption بحیرۂ جاوا سے ملنے والی لاشیں کو نزدیکی شہر تک لایا جا رہا ہے

فرانس کی حادثے کی تحقیقات کرنے والی ٹیم طیارے اور اس کا بلیک باکس ریکارڈر ڈھونڈنے کے لیے حساس آلات استعمال کر رہی ہے۔

حادثے کے نزدیکی شہر پنگ کلاں بن شہر میں حکام کے مطابق جمعے کو مزید لاشیں برآمد کی گئیں۔ ابھی تک صرف چار افراد کی شناخت ہو سکی ہے۔

ایک خاتون کو حیاتی لطفیہ حامد کے نام سے شناخت کیا گیا ہے جن کی نمازِ جنازہ جمعرات کو سورابایا میں ادا کی گئی۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ جہاز بحیرۂ جاوا کے اتھلے پانیوں میں ہے۔ جہاز کے ملبے کے کئی حصے مل گئے ہیں، جن میں پروں کے حصے بھی شامل ہیں۔

لیکن پانچ دنوں پر محیط تلاش کی بڑی کارروائی کے باوجود ابھی تک جہاز کا فیوزیلاژ (جہاز کا مرکزی حصہ جہاں مسافر بیٹھتے ہیں) نہیں ڈھونڈا جا سکا۔ حکام کا اندازہ ہے کہ اکثر مسافروں کی لاشیں اس کے اندر ہوں گی۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption جہاز کی تلاشی کی کارروائی میں متعدد ملکوں کے ہوائی اور بحری جہاز حصہ لے رہے ہیں

حادثے کے مجوزہ مقام سے قریب ترین شہر پنگ کلان بن میں موجود بی بی سی کے نامہ نگار روپرٹ ونگ فیلڈ ہیز کہتے ہیں کہ تلاشی کی ٹیمیں اب اس نتیجے پر پہنچی ہیں کہ ان کا کام ابتدائی اندازوں کی نسبت کہیں زیادہ مشکل ہو گا۔

انھوں نے کہا کہ خراب موسم اور متلاطم سمندر کی وجہ سے جہاز کو آنکھوں سے ڈھونڈ نکالنا دشوار ہو گیا ہے، اور اب ٹیمیں سونار اور حساس آلات استعمال کر کے سمندر کی تہہ کا جائزہ لے رہی ہیں۔

جہاز کے فیوزیلاژ اور فلائٹ ریکارڈر کی تلاش سے اس معمے کے حل میں مدد ملے گی کہ آخر وہ کیا وجوہات تھیں کہ جہاز اس طرح اچانک سمندر میں جا گرا۔

انڈونیشیا کے تلاش اور بچاؤ کے محکمے کے سربراہ بمبانگ سوئلیستیو نے جمعے کو بتایا کہ ملبہ اور لاشیں بحیرۂ جاوا میں پانچ کلومیٹر کے علاقے میں پھیلی ہوئی ہیں۔

جہاز پر 137 بالغ مسافر، 17 بچے اور ایک شیرخوار بچے کے علاوہ دو پائلٹ اور عملے کے پانچ ارکان سوار تھے۔ ان کی اکثریت کا تعلق انڈونیشیا سے تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جہاز کے عملے کی رکن حیاتی لطفیہ کی نمازِ جنازہ جمعرات کو سورابایا میں ادا کی گئی

ادھر بعض تفتیش کاروں نے کہا ہے کہ ممکنہ طور پر جب پائلٹ نے طوفان سے بچنے کے لیے تیزی سے بلندی پر جانے کی کوشش کی تو جہاز کا انجن بند ہو گیا اور وہ گرنا شروع ہو گیا۔

روئٹرز نے حکام کے حوالے سے خبر دی تھی کہ جہاز 32 ہزار فٹ کی بلندی پر پرواز کر رہا تھا اور اس نے خراب موسم سے بچنے کے لیے 38 ہزار فٹ کی بلندی پر جانے کی اجازت مانگی تھی۔

ایئر کنٹرول نے پائلٹ کو 34 ہزار فٹ تک جانے کی اجازت دی مگر پھر جہاز سے رابطہ منقطع ہو گیا۔

روئٹرز نے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ جہاز نے ’ناقابلِ یقین‘ تیزی سے اوپر چڑھنے کی کوشش کی، جو ایئربس A320 طیارے کی استعداد سے باہر تھا۔

اس سے قبل ایئر ایشیا کا سیفٹی ریکارڈ بہت عمدہ تھا اور اب تک اس کے جہازوں کو کوئی مہلک حادثہ پیش نہیں آیا تھا۔

اسی بارے میں