فرانس: پیرس حملوں سے تعلق کے شبہے میں 12 گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption فرانس کے علاوہ یورپ کے دیگر ممالک میں بھی مشتبہ شدت پسندوں کے خلاف کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے

فرانس میں پولیس نے اطلاعات کے مطابق پیرس میں گذشتہ ہفتے شدت پسندوں کے حملوں کے بعد دارالحکومت اور اس کے گردونواح سے 12 مشتبہ افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔

پیرس میں طنزیہ رسالے چارلی ایبڈو اور ایک کوشر مارکیٹ پر حملوں میں 17 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

خبر رساں ادارے اے ایف پی نے عدالتی ذرائع کے حوالے سے کہا ہے کہ گرفتار شدہ افراد سے حملہ آوروں کے سہولت کار ہونے کے تناظر میں تفتیش کی جا رہی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ممکنہ طور پر ان افراد نے حملہ آوروں کو ’ہتھیار اور اسلحے جیسی لاجسٹک مدد فراہم کی۔‘

اطلاعات کے مطابق فرانسیسی پولیس نے پیرس کے نواح میں پانچ قصبات میں چھاپے مارے۔

آئی ٹیلی کی رپورٹ کے مطابق بدھ کی شب مارے پولیس کارروائی کا ہدف موغوژ،گغینی، شاتنے مالابغی، اپینے سیوخ سین اور فلوئغی میغوژی کے قصبات تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption حملوں کے بعد فرانس میں دس ہزار اہلکار حفاظتی ڈیوٹی پر تعینات کیے گئے ہیں

فرانس کے علاوہ یورپ کے دیگر ممالک میں بھی مشتبہ شدت پسندوں کے خلاف کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔

جرمنی میں بھی پولیس نے جمعے کی صبح دو مقامات پر چھاپے مار کر دو مشتبہ افراد کو حراست میں لینے کی تصدیق کی ہے۔

اس سے پہلے جمعرات کی شب بیلجیئم میں پولیس نے انسدادِ دہشت گردی کی ایک کارروائی میں دو افراد کی ہلاکت کا دعویٰ کیا تھا اور کہا تھا کہ شام سے جہاد کے بعد واپس آنے والے یہ لوگ فوری حملے کا منصوبہ بنا رہے تھے۔

اس کے علاوہ سپین نے بھی اس معاملے کی تحقیقات شروع کر دی ہیں کہ پیرس کے حملہ آوروں میں سے ایک امیدی کولیبالی نے حملوں سے چند دن قبل میڈرڈ کا دورہ کیا تھا۔

اسی بارے میں