’64 فیصد صحافیوں کا خیال ہے امریکی حکومت نگرانی کر رہی ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption یہ سروے ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب امریکہ میں اس بات پر تشویش کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ حکومت قومی سلامتی کے بارے میں لیک ہونے والے امور اور ان کو کور کرنے والے صحافیوں کو نشانہ بنا رہی ہے

امریکہ میں کیے جانے والے ایک سروے کے مطابق متعدد انویسٹیگیٹو صحافیوں کو یقین ہے کہ امریکی حکومت ان کے فون کالز، ای میلز یا دوسرے آن لائن کمیونیکیشنز کی نگرانی کر رہی ہے۔

پیو ریسرچ سینٹر کی جانب سے جمعرات کو کیے جانے والے سروے کے مطابق 671 صحافیوں میں سے 64 فیصد کو یقین ہے کہ وہ امریکی حکومت کی نگرانی میں ہیں۔

سروے کے مطابق 71 فیصد صحافیوں جو قومی سکیورٹی، وزارتِ خارجہ یا وفاقی حکومت کے معاملات کو کور کرتے ہیں کا کہنا ہے کہ انھیں شبہ ہے کہ وہ حکومت کی نگرانی میں ہیں۔

پیو ریسرچ سینٹر اور کولمبیا یونیورسٹی ٹو سینٹر فار ڈیجیٹل جرنلزم نے مشترکہ طور پر یہ سروے کیا۔

اس سروے میں تحقیقاتی رپورٹرز، ایڈیٹرز اور پروڈیوسرز سے تین سے 28 دسمبر کے دوران سوالات پوچھے گئے۔

یہ خبر ایک ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب امریکہ میں اس بات پر تشویش کا اظہار کیا جا رہا ہے کہ حکومت قومی سلامتی کے بارے میں لیک ہونے والے امور اور ان کو کور کرنے والے صحافیوں کو نشانہ بنا رہی ہے۔

پیو ریسرچ سینٹر کی جانب سے کیے جانے والے سروے میں شامل آدھے صحافیوں کا کہنا تھا کہ ان کے ادارے کے مالک ان کی حفاظت کے لیے مناسب اقدامات نہیں کر رہے ہیں۔

سروے میں شامل 14 فیصد صحافیوں کا کہنا تھا کہ انھوں نے خدشات کے باعث گذشتہ ایک سال کے دوران کسی خبر کا یا کسی ذریعے تک پہنچنے کی کوشش نہیں کی۔

سروے میں 49 فیصد صحافیوں کا کہنا تھا کہ انھوں نے حساس دستاویزات کو اپنے پاس رکھنے کا طریقۂ کار بدل دیا جبکہ 29 فیصد صحافیوں کا کہنا تھا کہ انھوں نے اپنے ساتھی رپورٹرز، ایڈیٹرز یا پروڈیوسروں کے ساتھ رابطہ کرنے میں غیر معمولی حفاظتی اقدامات اختیار کیے۔

اسی بارے میں