’انڈونیشین نوکرانی کی چھٹی کرا دو‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption انڈونیشیا کا کہنا ہے کہ یہ اشتہار ان کے لیے ’نہایت کربناک ہے۔‘

انڈونیشا نے ملائشیا میں دکھائے جانے والے ویکیوم کلینر کے ایک اشتہار پر باقاعدہ شکایت کی ہے جس میں صارفین سے کہا گیا ہے کہ وہ نیا ویکیوم خریدیں اور اپنی ’ملائشین ملازمہ کو ابھی نوکری سے فارغ کر دیں۔‘

انڈونیشیا کا کہنا تھا کہ یہ اشتہار ’نہایت کربناک ہے اور اس سے انڈونیشیا کی پوری قوم کے جذبات کو مجروح کیا گیا ہے۔‘

واضح رہے کہ ملائشیا میں ایسی ہزاروں خواتین موجود ہیں جن کا تعلق انڈونیشیا سے ہے اور وہ ملائشیا میں گھریلو ملازموں کے طور پر کام کرتی ہیں۔ ملائشیا میں انڈونیشین خواتین کے ساتھ مبینہ برے سلوک کے حوالے سے دونوں ممالک میں تناؤ پایا جاتا ہے۔

اشتہار پر تنازع ایک ایسے وقت اٹھا ہے جب انڈونیشیا کے صدر جوکو ودودو ملائشیا کے دورے پر جا رہے ہیں۔

مذکورہ اشتہار میں ایک سفید فام شخص کو کرسی پر آرام کرتے دکھایا گیا ہے اور اس کے قریب ہی ویکیوم کلینر پڑا ہوا ہے۔ اگرچہ تنازع کے بعد اشتہار کو انٹرنیٹ سے ہٹا دیا گیا ہے لیکن بہت سے لوگوں نے اسے سوشل میڈیا ویب سائٹس پر ایک دوسرے سے شیئر کر لیا تھا، جس کے بعد انڈونیشیا کی جانب سے بہت سے شکایات منظر عام پر آ گئیں۔

ان شکایات کے بعد ملائشیا میں انڈونیشیا کے سفیر نے اشتہار پر پابندی لگانے کا مطالبہ کیا اور ان کا کہنا تھا کہ انڈونیشیا مذکورہ کمپنی کے خلاف قانونی چارہ جوئی کے بارے میں بھی سوچ رہا ہے۔

گذشتہ برسوں میں ملائشیا میں انڈونیشیا سے آئی ہوئی خواتین کے ساتھ گھروں میں مبینہ برے سلوک کی اطلاعات آتی رہی ہیں جس کے بعد جون 2009 میں انڈونیشیا نے خواتین پر پابندی لگا دی تھی کہ وہ اس قسم کی ملازمتوں کے لیے ملائشیا نہیں جا سکتیں۔

اس کے بعد جب دونوں ممالک گھریلو ملازماؤں کے حالات کار کو بہتر بنائے جانے پر متفق ہو گئے تو یہ پابندی ختم کر دی گئی تھی۔ دیگر باتوں کے علاوہ اس بات پر بھی اتفاق ہو گیا تھا کہ گھریلو ملازماؤں کو ہفتے میں ایک دن کی چھٹی ضرور دی جائے گی اور مالکان کو اجازت نہیں ہوگی کہ وہ گھریلوں ملازماؤں کے پاسپورٹ اپنی تحویل میں رکھ سکیں۔

توقع ہے کہ صدر ودودو اور ملائشیا کے وزیرِاعظم کے درمیان مذاکرات میں ان خواتین کے مسئلے پر بھی بات ہو گی۔

گذشتہ برس اقتدار میں آنے کے بعد سے انڈونیشیا کے صدر کا ملائشیا کا یہ پہلا دورہ ہوگا۔

اسی بارے میں