دولتِ اسلامیہ نے اہم عراقی قصبے پر قبضہ کر لیا

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پنٹاگون کے ایک ترجمان ریئل ایڈمیرل جان کربی نے کہا ہے کہ گذشتہ چند مہینوں کے دوران ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں نے کسی نئي جگہ پر قبضہ کیا ہے۔

امریکی وزارت دفاع نے کہا ہے کہ شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے عراق کے صوبے انبار میں ایک اہم فوجی فضائی اڈے کے قریب واقع قصبے پر قبضہ کر لیا ہے۔

البغدادی نامی یہ قصبہ عین الاسد ایئر بیس سے آٹھ کلومیٹر کے فاصلے پر ہے جہاں سینکڑوں امریکی فوجی قیام پذیر ہیں۔

پینٹاگون کے ایک ترجمان ریئل ایڈمرل جان کربی نے کہا ہے گذشتہ چند مہینوں کے دوران ایسا پہلی بار ہوا ہے کہ دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں نے کسی نئي جگہ پر قبضہ کیا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کہ دولتِ اسلامیہ کے جنگجوؤں نے اس فضائی اڈے پر بھی جمعے کو حملہ کیا تھا جسے پسپا کر دیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دولتِ اسلامیہ نے گذشتہ سال عراق اور شام کے بڑے حصے پر قبضہ کر لیا تھا

دولتِ اسلامیہ کے شدت پسندوں نے عین الاسد نامی فوجی اڈے پر اس وقت حملہ کیا جب امریکی فوجی عراقی افواج کو تربیت دے رہے تھے۔

ادھر امریکہ نے کہا ہے کہ وہ عراق میں موجود دولتِ اسلامیہ کے شدت پسندوں کے خلاف اپنی فضائی مہم کو وسیع کر رہا ہے۔

خیال رہے کہ دولتِ اسلامیہ نے گذشتہ سال عراق اور شام کے بڑے حصے پر قبضہ کر لیا تھا۔

امریکی فوج کا کہنا ہے کہ اس کے جنگی جہازوں نے جمعرات کو عراق کے قصبوں موصل اور کرکوک میں دولتِ اسلامیہ کے ٹھکانوں پر متعدد فضائی کارروائیاں کیں تھیں۔

اسی بارے میں