سالانہ پریڈ ’اسلامی شدت پسندوں‘ کے حملے کے خطرے کے باعث منسوخ

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption براؤن شویگ کارنیول پریڈ میں ہر سال تقریباً ڈھائی لاکھ افراد شرکت کرتے ہیں

پولیس کے مطابق جرمنی کے شمالی شہر براؤن شویگ میں سالانہ کارنیوال پریڈ اسلامی شدت پسندوں کے حملے کے خطرے کے پیشِ نظر مختصر نوٹس پر منسوخ کر دی گئی ہے۔

ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ ’سکیورٹی اداروں کو مسلمان شدت پسندوں کی جانب سے پریڈ پر حملہ کرنے کی تیاری کی اطلاعات ملی تھیں۔‘

پولیس نے لوگوں پر زور دیا ہے کہ وہ پریڈ میں شرکت نہ کریں۔

یہ پریڈ ملک بھر میں مشہور ہے اور پریڈ کے شروع ہونے سے صرف 90 منٹ پہلے منسوخ کیا گیا۔

پولیس کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ’بہت سے لوگ پریڈ میں شرکت کے لیے ٹرین سٹیشن پر پہلے ہی پہنچ چکے تھے جنھیں ہم نے واپس بھیج دیا کیونکہ ہم کسی قسم کا خطرہ مول نہیں لینا چاہتے۔‘

خیال رہے کہ براؤن شویگ کارنیول پریڈ میں ہر سال تقریباً ڈھائی لاکھ افراد شرکت کرتے ہیں۔

کارنیول پریڈ کو منسوخ کرنے کا فیصلہ اس کے منتظمین اور شہر کے میئر نے کیا۔ مقامی ذرائع ابلاغ سے بات کرتے ہوئے میئر کا کہنا تھا کہ ’یہ ہمارے شہر کے لیے ایک اداس دن ہے پر سکیورٹی خطرات کی وجہ سے ہمارے پاس اور کوئی چارہ نہیں تھا۔‘

اگرچہ پریڈ کی منسوخی کا فیصلہ ڈنمارک میں ہونے والے حملوں کے چند گھنٹوں بعد کیا گیا ہے مگر جرمن پولیس کا موقف ہے کہ دونوں کا آپس میں کوئی تعلق نہیں ہے۔

اسی بارے میں