یروشلم کے میئر نے حملہ آور کو دبوچ لیا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ویڈیو فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ میئر نر برکات مشتبہ حملہ آور کی جانب بڑھ رہے ہیں اور پھر اسے زمین پر گرا لیتے ہیں

یروشلم کے میئر نر برکات نے چاقو سے مسلح ایک مشتبہ فلسطینی حملہ آور کے ساتھ ہاتھا پائی کے بعد اسے قابو کر لیا۔

میئر نر برکات کا کہنا ہے کہ جب ان کی گاڑی سٹی ہال کے قریب سے گزر رہی تھی تو انھوں نے ایک شخص کو حملہ آور ہوتے دیکھا۔

میئر نے کہا کہ انھوں نے فوراً اپنے ڈرائیور کوگاڑی روکنے کا حکم دیا۔

ویڈیو فوٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے کہ میئر نر برکات مشتبہ حملہ آور کی جانب بڑھ رہے ہیں اور پھر اسے زمین پر گرا لیتے ہیں۔

میئر برکات نے بعد میں ایک پریس کانفرنس میں اس واقعے کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ جب اس نے حملہ ہوتے دیکھا تو اس نے ڈرائیور کو فوراً گاڑی روکنے کا حکم دیا۔

انھوں نے کہا کہ وہ اپنے باڈی گارڈ کے ہمراہ آور کو قابو کرنے کے لیے آگے بڑھے اور جب باڈی گارڈ نے اپنی گن حملہ آور پر تانی تو اس نے اپنے ہاتھ سے چاقو گرا دیا۔ اس کے بعد میئر اور کئی دوسرے لوگوں نے نوجوان کو دبوچ لیا۔

پولیس نے ایک 18 سالہ فلسطینی نوجوان کو گرفتار کر لیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ فلسطینی نوجوان غیر قانونی پر اسرائیل میں داخل ہوا تھا۔

حملے میں زخمی ہونے والے 27 سالہ شخص کو ہسپتال لے جایاگیا ہے۔

قدامت پسند یہودی شخص پر حملے کے محرکات ابھی تک واضح نہیں ہیں لیکن حالیہ مہینوں میں فلسطینوں کے اسرائیلی شہریوں پر حملوں کی لہر میں یہ سب سے تازہ واقع ہے۔

رواں سال جنوری میں چاقو سے مسلح ایک فلسطینی شخص نے بس میں سوار میں مسافروں پر حملہ کیا تھا جس میں کم از کم 12 لوگ زخمی ہوگئے تھے۔ اس شخص کو محکمۂ جیل کے افسر نے گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا۔

اسی بارے میں