برطانیہ میں اسلام مخالف تنظیم کا پہلا مظاہرہ

Image caption پگیدا جرمن تنظیم ہے جو یورپ میں اسلام کے بڑھتے اثرات اور مسلمانوں کی ہجرت کے خلاف ہے

برطانیہ میں اسلام مخالف جرمن تنظیم ’پیگیڈا‘ کے حامیوں اور اس کے مخالفین نے پہلی بار احتجاج مظاہرہ کیا ہے۔

برطانیہ میں سنیچر کوجرمن گروپ ’پیگیڈا‘کے تقریباً 400 حامی نیو کاسل سٹی کی بِگ مارکیٹ میں اکھٹے ہوئے جبکہ اس کے مقابلے میں30 سے 40 میٹر دور نیوگیٹ سٹریٹ میں نیوکاسل یونائٹس کے 1,500 افراد نے مظاہرہ کیا۔

پولیس نے مظاہرین کے دونوں گروہوں کو الگ الگ رکھنے کے لیے علاقے کو گھیرے میں لے رکھا تھا تاہم پانچ افراد کو اس وقت حِراست میں لیا گیا جب ان کا جھگڑا ہو گیا۔

بریڈ فوڈ سے تعلق رکھنے والے برطانوی پارلیمان کے رکن جارج گیلوے نے ’پیگیڈا‘ کے مقابلے میں نیو کاسل یونائٹس کے مظاہرے میں شرکت کی۔

ریلی میں موجود بی بی سی کی نامہ نگار کے مطابق زیادہ تر مظاہرین نیوکاسل سے ہی آئے تھے تاہم چند کا تعلق یورپ کے دوسرے حصوں سے بھی تھا۔

ان مظاہرین میں نیشنل ہیلتھ سروس کے اہلکاروں اور فیکٹری میں کام کرنے والوں کے علاوہ ذاتی کاروبار کرنے والے بھی شامل تھے۔

اگرچہ نیوکاسل کے مظاہرے میں جرمنی کے ایک نمائندے نے شرکت کی تاہم مظاہرے کے منتظمین کا کہنا تھا کہ جرمنی کی تنظیم پیگیڈا سے ان کا کوئی تعلق نہیں جس نے کئی ہزار مظاہرین کو اپنے مظاہروں میں متوجہ کیا تھا۔

ان کا یہ بھی موقف ہے کہ یہ مظاہرہ انتہا پسندی کے خلاف عوام کو آگاہ کرنے کے لیے کیا جا رہا ہے لیکن یہ اسلام مخالف یا انتہائی دائیں بازو کی سوچ کے حق میں نہیں۔

دوسری جانب سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر موجود پیغامات میں یہ دعویٰ بھی کیاگیا کہ پیگیڈا کے مظاہرے کا خیر مقدم نہیں کیا گیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ MORGAN MEAKER
Image caption پگیدا کے خلاف برطانیہ کے علاوہ دیگر ممالک میں بھی مظاہرے ہوچکے ہیں

پیگیڈاکے مقابلے میں نیوکاسل یونائٹس کے منتظم دیپو احد نے کہا ’وہ مسلمان کمیونٹی کو نشانہ بنا رہے ہیں جو پہلے ہی معاشرے میں عفریت پرست سمجھے جاتے ہیں۔‘

ادھر پیگیڈا کے ترجمان مارین روجر کہتے ہیں ’ہم اسلام مخالف نہیں، ہم یہاں گروہوں میں پھوٹ ڈالنے کے لیے نہیں آئے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ ہم تمام مسلمانوں کو دعوت دیتے ہیں کہ وہ ہر قسم کی انتہاپسندی کے خلاف ہمارے ساتھ آئیں۔

پیگیڈا نامی یورپی گروہ مغرب میں اسلام کے بڑھتے ہوئے اثرات اور وہاں مسلمانوں کی نقل مکانی کے خلاف ہے۔

اس تنظیم نے چیک ریپبلک، ڈنمارک اور ناروے میں بھی مظاہرے کیے جبکہ کئی یورپی ممالک مثلاً سپین، سویڈن اور سوئٹزرلینڈ میں اس کے کئی حامی گروہ بن چکے ہیں۔

اسی بارے میں