پاکستانی شہری پر دہشتگردی کی سازش کا جرم ثابت

Image caption عابد نصیر کو عمر قید کی سزا سنائی جا سکتی ہے۔

ایک امریکی جیوری نے برطانیہ سے جلاوطن کیےجانے والے 28 سالہ پاکستانی شخص عابد نصیر کو برطانیہ میں القاعدہ کا سیل چلانے اور مانچسٹر اور نیویارک میں حملے کرنے کی القاعدہ کی سازش میں ملوث ہونے کا مجرم قرار دے دیا ہے۔

اس مقدمے کے دوران پاکستانی شہر ایبٹ آباد میں القاعدہ کے سربراہ اسامہ بن لادن کی رہائش گاہ سے ملنے والے کاغذات کو پہلی بار کسی عدالت میں بطور شہادت پیش کیاگیا۔

وکیل استغاثہ نے عدالت کو بتایا تھا کہ القاعدہ کے سربراہ کی رہائش گاہ سے ملنے والی دستاویزات میں یورپ میں دہشتگردی کے منصوبے کا ذکر ملتا ہے۔

امریکی جیوری نے عابد نصیر کو دہشتگردوں کی عملی مدد، دہشتگردی کے لیے ذرائع مہیا کرنے اور مانچسٹر کے آرناڈیل سکوائر میں دھماکے کےلیے تباہ کن مواد مہیا کرنے کے الزام کو صحیح مانتے ہوئے انھیں مجرم قرار دے دیا ہے۔

عابد نصیر کی سزا کا اعلان بعد میں کیا جائے گا اور انھیں عمر قید کی سزا سنائی جا سکتی ہے۔

12 رکنی جیوری اس نتیجے پر پہنچی ہے کہ عابد نصیر القاعدہ کے اس سیل کے سربراہ تھے جس نے مانچسٹر اور نیویارک میں حملے کی سازش تیار کی تھی۔

عابد نصیر جو اپنا دفاع خود کر رہے تھے نے ان الزامات کو بے بنیاد قرار دیا ہے۔

عابد نصیر نے کہا کہ وہ برطانیہ ڈگری حاصل کرنے گئے تھے نہ کہ دہشت گردی کرنے۔

برطانیہ کی ایک عدالت نےناکافی شہادتوں کی بنا پر عابد نصیر کے خلاف مقدمہ ختم کر دیا تھا لیکن برطانیہ نے انھیں امریکہ کے حوالے کر دیا ۔

برطانوی انٹیلی جنس کے چھ افسران بطور گواہان جیوری کے سامنے پیش ہوئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption عابد نصیر کو 2009 میں ایک درجن افراد کے ہمراہ مانچسٹر کے شاپنگ سینٹر کو نشانہ بنانے کی سازش کرنے کے شبہ میں گرفتار کیا گیا تھا

استغاثہ کا کہنا تھا کہ عابد نصیر ایک سازش میں ملوث تھا جس کے تحت مانچسٹر اور نیویارک کے زیر زمین ریلوے سمیت کئی جگہوں پر بم دھماکے کیے جانے کا منصوبہ بنایا گیا تھا۔

استغاثہ کا کہنا تھا کہ ای میلز سے ظاہر ہوتا ہے کہ عابد نصیر اور ان کے دو ساتھی القاعدہ کے کسی رکن سے رابطے میں تھے۔

نصیر نے خفیہ ای میلز کےذریعے مانچسٹر میں ایک شاپنگ سینٹر کو نشانہ بنانے کی بات کی۔

عابد نصیر ان ایک درجن افراد میں شامل تھے جنھیں سنہ 2009 میں برطانیہ میں مانچسٹر کے شاپنگ سینٹر کو نشانہ بنانے کی سازش کرنے کے شبہے میں گرفتار کیا گیا تھا۔

اسی بارے میں