’میرے ہوتے ہوئے فلسطینی ریاست نہیں بن سکتی‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کسی بھی فریق کے ان انتخابات میں ایک چوتھائی سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے کا امکان ظاہر نہیں کیا جا رہا۔

اسرائیل میں عوام منگل کو پارلیمانی انتخابات میں ووٹ ڈال رہے ہیں اور اس الیکشن میں موجودہ وزیرِ اعظم بن یامین نتن یاہو کی لیکود پارٹی اور صیہونی اتحاد کے مابین سخت مقابلے کی توقع کی جا رہی ہے۔

پولنگ مقامی وقت کے مطابق صبح سات بجے شروع ہوئی اور رات دس بجے تک جاری رہی گی۔

وزیرِ اعظم بن یامین نتن یاہو نے پولنگ کے آغاز سے قبل ایک انٹرویو میں کہا ہے کہ اگر وہ انتخابات میں دوبارہ کامیاب ہو جاتے ہیں تو فلسطینی ریاست نہیں بننے دیں گے۔

نتن یاہو ملک کے سب سے زیادہ دیر تک برسرِاقتدار رہنے والے حکمران بننے کے لیے کوشاں ہیں اور ان کا تازہ بیان اپنی جماعت لیکود پارٹی کے لیے صیہونی اتحاد (زاؤنسٹ یونین) کے مقابلے میں حمایت حاصل کرنے کی کوشش تصور کیا جا رہا ہے۔

لیبر پارٹی اور اسرائیل ہیت نو جماعت کے اتحاد نے وعدہ کیا ہے کہ وہ فلسطینیوں اور بین الاقوامی برادری کے ساتھ تعلقات بہتر بنائیں گے۔

کسی بھی فریق کے ان انتخابات میں ایک چوتھائی سے زیادہ ووٹ حاصل کرنے کا امکان ظاہر نہیں کیا جا رہا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولنگ مقامی وقت کے مطابق صبح سات بجے شروع ہوئی اور رات دس بجے تک جاری رہی گی۔

اے آر جی نیوز ویب سائٹ سے بات کرتے ہوئے نتن یاہو کا کہنا تھا کہ فلسطینیوں کے ہاتھوں میں اراضی جانے کا مطلب ہے کہ اسرائیل کو اسلام پسندوں کے حملوں کے لیے کھلا چھوڑ دیا جائے۔

انھوں نے کہا ’جو کوئی بھی اس بات سے صرفِ نظر کر رہا ہے وہ ریت میں سر چھپا رہا ہے۔ بائیں بازو کی جماعت بار بار ریت میں سر چھپا لیتی ہے۔‘

جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا ان کے دوبارہ منتخب ہونے کی صورت میں فلسطینی ریاست قائم نہیں ہو پائے گی تو ان کا جواب تھا: ’یقیناً۔‘

سنہ 2009 میں انھوں نے فلسطینی ریاست کے قیام کے خیال کی حمایت کی تھی بشرطیکہ اسے غیر مسلح کیا جائے اور فلسطینی اسرائیل کے وجود کو تسلیم کریں۔

گذشتہ ہفتے کے اختتام سے قبل شائع کیے گئے رائے عامہ کے جائزوں کے مطابق صہیونی اتحاد کو اکثریتی نشستیں حاصل ہونے کا امکان ہے۔

نامہ نگاروں کا کہنا ہے کہ ممکن ہے کہ انتخابات کے بعد مخلوط حکومت کے قیام کے لیے طویل مذاکراتی دور شروع ہوجائے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption کولانو جماعت کے رہنما موشی کاہلون کی حمایت حکومت سازی میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے

نتن یاہو مخالفین پر مسلسل یہ الزامات عائد کرتے رہے ہیں کہ وہ فلسطینیوں کے ساتھ امن مذاکرات میں یروشلم پر اسرائیلی دارالحکومت کے دعوے سے پیچھے ہٹ جائیں گے۔

پیر کو نتن یاہو نے مشرقی بیت المقدس میں آباد کاری کے حوالے سے بات کرتے کہا کہ وہ واحد شخص ہیں جو شہر کی سلامتی کو یقینی بنا سکتے ہیں۔

فلسطینی سنہ 1967 میں ہونے والی جنگ کے بعد سے مشرقی بیت المقدس پر جاری اسرائیل قبضے کا خاتمہ چاہتے ہیں اور اس علاقے کو اپنی ریاست کے دارالحکومت کے طور پر دیکھتے ہیں۔

اس بات کے اشارے ہیں کہ جو پارٹی زیادہ کامیابی حاصل کرے گی اسے حکومت سازی کے لیے ایک دوسری جماعت کولانو کی حمایت کی ضرورت پڑے گی تاہم اب تک اس کے رہنما موشے کاہلون نے کسی کے لیے حمایت ظاہر نہیں کی ہے۔

اسی بارے میں