سابق تھائی وزیرِاعظم پر مقدمہ چلانے کی منظوری

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption ینگ لک کی جماعت تھائی لینڈ کی مقبول ترین سیاسی جماعت رہی ہے

تھائی لینڈ کی اعلیٰ ترین عدالت نے ملک کی سابق وزیرِ اعظم ینگ لک شیناوترا پر چاولوں کی زیادہ قیمت پر خریداری کے معاملے میں فوجداری مقدمہ چلانے کی منظوری دے دی ہے۔

تھائی سپریم کورٹ کے جج ویراپل تانگسوان نے جمعرات کو کہا ہے کہ نو رکنی عدالتی پینل نے اٹارنی جنرل کے دفتر کی جانب سے فراہم کردہ دستاویزات کا جائزہ لیا ہے اور وہ اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ یہ معاملہ عدالت کے دائرۂ اختیار میں آتا ہے۔

ینگ لک کے خلاف مقدمے کی کارروائی کا آغاز 19 مئی سے متوقع ہے اور اگر اس معاملے میں وہ مجرم قرار پاتی ہیں تو انھیں دس برس قید تک کی سزا ہو سکتی ہے۔

دو ماہ قبل چاولوں کی اسی متنازع سبسڈی سکیم میں بطور وزیرِ اعظم ینگ لک کے کردار پر تھائی پارلیمان بھی ان کے مواخذے کی منظوری دے چکی ہے جس کے بعد وہ ملکی سیاست میں پانچ برس تک حصہ نہیں لے سکتیں۔

ینگ لک شیناوترا کو مئی 2014 میں ملک میں فوجی بغاوت سے قبل عدالتی فیصلے کے نتیجے میں وزارتِ عظمیٰ چھوڑنی پڑی تھی اور ان کے حامیوں کا کہنا ہے کہ ان پر عائد کیے جانے والے الزامات ان کا سیاسی کریئر ختم کرنے کی سازش کا حصہ ہیں۔

ینگ لک کی جماعت تھائی لینڈ کی مقبول ترین سیاسی جماعت رہی ہے اور سنہ 2001 سے اب تک ہونے والی انتخابات جیتتی رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption تھائی پارلیمان بھی ینگ لک کے مواخذے کی منظوری دے چکی ہے جس کے بعد وہ ملکی سیاست میں پانچ برس تک حصہ نہیں لے سکتیں

اٹارنی جنرل کے دفتر کی جانب سے سپریم کورٹ میں دستاویزات کے 20 ڈبے جمع کروائے گئے تھے جن میں ینگ لک پر چاولوں کی سبسڈی پروگرام کی نگرانی میں اپنی ذمہ داریوں سے صرفِ نظر کا الزام لگایا گیا تھا۔

تھائی لینڈ کے قومی انسدادِ بدعنوانی کمیشن نے بھی حال ہی میں ملک کی وزارتِ خزانہ سے کہا ہے کہ وہ ینگ لک پر مقدمہ کر کے ان سے کم از کم چھ سو ارب بھات بطور ہرجانہ وصول کرے۔

ینگ لک کے خلاف چاولوں پر سبسڈی کے معاملے میں الزام ہے کہ ان کی حکومت نے تھائی کسانوں سے جس قیمت پر چاول خریدے وہ عالمی منڈی کی قیمت سے کہیں زیادہ تھی۔

اس خریداری کی وجہ سے ملک میں حکومتی گوداموں میں چاول کے ڈھیر لگ گئے اور انھیں برآمد کرنے میں شدید مشکلات پیش آئیں۔

وزارتِ عظمیٰ سے علیحدگی کے باوجود ینگ لک اور ان کے بھائی اور سابق وزیرِ اعظم تھاکسن شیناوترا ملک کی غریب عوام میں بہت مقبول ہیں لیکن ملک کا امیر اور متوسط طبقہ انھیں پسند نہیں کرتا اور ان پر بدعنوانی اور طاقت کے ناجائز استعمال کے الزامات لگاتا ہے۔

اسی بارے میں