شام میں ہیلی کاپٹر گر کر تباہ

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption انٹرنیٹ پر پوسٹ کی گئی ویڈیوز اور تصاویر میں نیلے رنگ کے ہیلی کاپٹر کو تباہ حالت میں دیکھا جا سکتا ہے تاہم آزاد ذرائع سے ان تصاویر کے تصدیق نہیں ہو سکی

شام سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق اتوار کو باغیوں کے زیرانتظام شمال مغربی علاقے میں شامی حکومت کا ایک ہیلی کاپٹر گر کر تباہ ہوگیا ہے۔

سیرین آبرویرٹری فار ہیومن رائیٹس کے مطابق ہیلی کاپٹر حزب اختلاف کے جنگجوؤں اور النصرہ فرنٹ کے زیرانتظام صوبہ ادلب کے علاقے جبل الزاویہ میں گرکر تباہ ہوا۔

شام کے اس مبصرگروپ کے مطابق ہیلی کاپٹر کے عملے کے چار اراکان کو حراست میں لے لیا گیا جبکہ عملے کا ایک رکن ہلاک ہو گیا ہے۔

شام میں چار سال پہلے شروع ہونے والی خانہ جنگی میں اب تک دو لاکھ شامی افراد ہلاک اور ایک کروڑ دس لاکھ نقل مکانی کر چکے ہیں۔

سیرین آبرویرٹری فار ہیومن رائیٹس کے مطابق شمالی شہر معرت النعمان میں ہیلی کاپٹر کو ‘تکنیکی خرابی کی بنا پر ایمرجنسی لینڈنگ‘ کرنا پڑی تھی۔

مبصر گروپ کے مطابق ہیلی کاپٹر میں کم از کم چھ افراد سوار تھے اور عملے کے چھٹے رکن کے بارے میں تاحال کوئی اطلاع نہیں ہے۔

خبررساں ادارے روئٹرز کے مطابق شام کے سرکاری ٹی وی نے ایک فوجی ہیلی کاپٹر کے شمال مغربی علاقے میں ہنگامی لینڈنگ کی تصدیق کی ہے اور کہا ہے کہ عملے کے اراکین کی تلاش جاری ہے۔

انٹرنیٹ پر پوسٹ کی گئی ویڈیوز اور تصاویر میں نیلے رنگ کے ہیلی کاپٹر کو چٹانوں کے درمیان تباہ حالت میں دیکھا جا سکتا ہے۔

شامی حکومت پر اقوام متحدہ کی سکیوٹی کونسل کی قرارداد کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ہیلی کاپٹروں کے ذریعے سینکڑوں مقامات پر بیرل بم گرانے کا الزام بھی عائد کیا جاتا ہے۔

تاہم فروری میں بی بی سی کو دیے گئے ایک انٹرویو میں شامی صدر بشارالاسد نے بیرل بموں کے استعمال کی تردید کی تھی۔

اسی بارے میں