فوجی ڈیوٹی پر پرنس ہیری آسٹریلیا میں

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption برطانیہ کے شہزادے پرنس ہیری چار ہفتے کی ڈیوٹی پر آسٹریلیا کے دارالحکومت کینبیرا پہنچ گئے ہیں

برطانیہ کے شہزادے پرنس ہیری چار ہفتے کے لیے آسٹریلیا پہنچ گئے ہیں جہاں وہ آسٹریلوی دفا‏عی فوج کے ساتھ کام کریں گے۔

ڈیوٹی پر حاضر ہونے سے قبل انھوں نے کینبیرا میں نامعملوم آسٹریلوی فوجیوں کے مزار پر پھولوں کا ہار چڑھایا جنھوں نے برطانیہ اور آسٹریلیا کی متحدہ مہم کے لیے جان دی تھی۔

اس موقعے پر انھوں نے ملکہ برطانیہ کا ایک خط بھی پیش کیا جس میں انھوں لکھا تھا کہ اس دورے سے ان کا پوتا آسٹریلوی فوج سے ’بہت استفادہ حاصل کرے گا۔‘

شہزادے کو فوج میں ان کے عہدے کے سبب کیپٹین ویلز کہا جاتا ہے اور وہ دس سال کی سروس کے بعد جون میں برطانوی فوج سے سبکدوش ہو جائیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption آسٹریلیا کے دارالحکومت کینبیرا میں انھوں نامعلوم فوجیوں کے مزار پر پھول چڑھایا

آسٹریلیا میں اپنی تعیناتی کے دوران وہ وہاں کے مقامی فوجیوں کے ساتھ پیٹرولنگ کریں اور ملک کی سپیشل فورسز کے ساتھ تربیت بھی حاصل کریں گے۔

انھوں نے سرکاری طور پر دفاعی فوج کے سربراہ ایئر چیف مارشل مارک بنسکن کو رپورٹ کیا۔

انھوں نے ملکہ کا جو خط حوالے کیا اس میں لکھا تھا: ’میں اس بات سے بہت خوش ہوں کہ آسٹریلوی اور برطانوی فوجوں کے درمیان طویل رشتے میں میرے پوتے پرنس ہیری کا فوجی کے طور پر جوائن کرنا بھی شامل ہو گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ڈیوٹی کے لیے پرنس ہیری نے سرکاری طور پر دفاعی فوج کے سربراہ ایئر چیف مارشل مارک بنسکن کو رپورٹ کیا

’ہماری مسلح فوجیں ایک ساتھ صلاحیتوں اور وسائل کا لین دین کرتی ہیں اور ہمارے مشترکہ اقدار کو قائم رکھنے کی پابند ہیں۔‘

خط میں مزید لکھا گیا ہے: ’مجھے معلوم ہے کہ کیپٹین ولز آسٹریلوی فوجیوں کے ساتھ وقت گذارنے سے بہرمند ہوں گے اور میں انھیں اپنے یہاں خوش آمدید کہنے کے لیے شکریہ ادا کرتی ہوں۔‘

آسٹریلوی فوج نے کہا ہے کہ ’یہ تعیناتی بہت چیلنجنگ اور سرگرم ہوگی‘ جبکہ پرنس نے کہا ہے کہ وہ ’اس کے لیے تیار ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption آسٹریلیا کے دارالحکومت میں لوگوں نے شہزادے کا اس طرح استقبال کیا

اس تعیناتی میں مختصر وقفہ اس وقت آئے گا جب وہ اس ماہ گیلی پولی کی صد سالہ تقریب کے لیے ترکی جائیں گے۔

خیال رہے کہ سنہ 1915 میں گیلی پولی کی متحدہ مہم کے دوران ہزاروں آسٹریلوی اور نیوزی لینڈ کے فوجی مارے گئے تھے۔

فوج سے علیحدہ ہونے کے بعد پرنس ہیری رضاکارانہ اور فلاحی کاموں میں حصہ لیں گے۔

اسی بارے میں